جمعرات , 1 دسمبر 2022

بحرین کے بادشاہ کے حکم پر بحرینی پارلیمنٹ کے اختیارات میں کمی

منامہ:مبصرین نے متفقہ طور پر اس بات پر اتفاق کیا کہ بحرین کے بادشاہ حمد بن عیسیٰ بن سلمان آل خلیفہ کی جانب سے بحرینی پارلیمنٹ کے اختیارات میں کمی کے حوالے سے جاری کردہ حکم نامہ آمرانہ حکمرانی کے استحکام کی نمائندگی کرتا ہے۔

بادشاہ حمد نے آئینی آرٹیکلز کو اکھاڑ پھینکا اور انہیں کاغذ پر سیاہی بنا دیا، ایک ہی شاہی فرمان کے ساتھ جس نے ایوان نمائندگان کے بائی لاز میں 15 آرٹیکلز کو تبدیل کرنے اور ان میں جو کمی تھی اسے شامل کرنے کے بعد ایوان نمائندگان کو دوسری شوریٰ کونسل میں تبدیل کردیا۔

الجھن سے بچنے کے لیے، یہ نئی ترامیم وہ ترامیم نہیں ہیں جو 20 اپریل 2020 کو ایوان نمائندگان نے منظور کی تھیں، جہاں انہوں نے اپنے اختیارات میں نمایاں کمی کرنے پر اتفاق کیا تھا، خاص طور پر عام موضوعات پر بحث کے میدان میں۔

ضابطے میں بادشاہ کی ترامیم اور اضافے نے نمائندوں سے بدیہی اختیارات حاصل کیے، اور پارلیمنٹ کے سپیکر اور پارلیمنٹ کے خرچ پر حکومت کو وسیع اختیارات دیے۔ واضح رہے کہ ایوانِ نمائندگان کے اسپیکر کا عہدہ، منتخب ہونے کے باوجود، مکمل طور پر شاہی عدالت کے زیر کنٹرول ہے۔

ان تبدیلیوں نے آئین کے آرٹیکل 32 کو مؤثر طریقے سے معطل کر دیا، جس میں کہا گیا ہے کہ "حکومت کا نظام قانون سازی، انتظامی اور عدالتی اختیارات کی علیحدگی پر مبنی ہے۔” جبکہ کل بادشاہ نے اپنے حکم نامے میں قانون سازی کے اختیارات سے لے کر بعض اوقات حکومت کو اور ایوان نمائندگان کے اسپیکر کو دے دیے، جو کہ 2002 سے شاہی دربار کے ہاتھوں میں کٹھ پتلی بننے کا رواج ہے۔

بادشاہ کی ترامیم نے آئین کے تین باب کی قدر کو عملی طور پر ختم کر دیا، جو کہ قانون سازی کے اختیارات کا باب ہے۔یہ درست ہے کہ ایوان نمائندگان ایک کونسل ہے جس کے اراکین کا انتخاب ووٹنگ کے عمل کے ذریعے کیا جاتا ہے، جو کہ منصفانہ نہیں ہے۔ تاہم، بادشاہ کی ترامیم کے نتیجے میں ایوان نمائندگان کو شوریٰ کونسل کی طرح بنا دیا گیا، ایسا ایوان جو اپنے ضوابط میں صرف پیچھے کی طرف ترمیم نہیں کر سکتا اور اپنے اختیارات سے دستبردار نہیں ہو سکتا۔

پھر بادشاہ آتا ہے اور باقی اختیارات چھین لیتا ہے اور نمائندوں کو محض (مردوں) اور عورتوں کو اسمبلی کی نشستوں پر بٹھا دیتا ہے بغیر اختیارات اور اختیار اور اہلیت کے نہ تو حکومت کو جوابدہ ٹھہرا سکتا ہے اور نہ ہی اس سے پوچھ گچھ کر سکتا ہے، ایسے نائبین جن کی فہرست میں کونسل کے صدر کے سامنے انہیں طلبہ جیسا بنانے کے لیے ترمیم کی گئی۔

مبصرین کا کہنا ہے کہ بحرین کی پارلیمنٹ اپنے ضوابط میں حالیہ تبدیلیوں کے بعد خلیجی مملکت میں جمہوری منظر اور سیاسی زندگی کے لیے ایک باضابطہ ادارے میں تبدیل ہو گئی ہے۔

چونکہ کونسل کے اختیارات – جو کہ حکومت کی کارکردگی پر نظر رکھنے کے لیے بحرینی عوام کی آنکھ ہوتی ہے – کے پاس صرف معمولی اختیارات ہی رہ گئے تھے، جس کے ساتھ یہ بحرینی حکومت کی شان و شوکت کے لیے ایک بند آواز میں بدل گئی۔

یہ بھی دیکھیں

آسٹریلوی وزیراعظم کا امریکا سے وکی لیکس کے بانی جولیان اسانج کیخلاف کارروائی ختم کرنے کا مطالبہ

کینبرا:آزادی اظہار کے لیے سرگرم کارکن اور وکی لیکس کے بانی جولیان اسانج خفیہ دستاویزات …