منگل , 6 دسمبر 2022

یو اے ای میں اسرائیلی دفاعی نظام نصب، کتنا کارگر ہوگا ؟

ابوظہبی:متحدہ عرب امارات میں صیہونی حکومت کے دفاعی نظام کو نصب کر دیا گیا ہے۔ صیہونی میڈیا کے مطابق متحدہ عرب امارات سے لی گئیں سیٹلائٹ تصاویر میں اس ملک میں صیہونی حکومت کے "باراک” نامی کم از کم دو فضائی دفاعی سسٹموں کو نصب دکھایا گیا ہے۔

فارس نیوز ایجنسی نے صیہونی میڈیا کے حوالے سے رپورٹ دی ہے کہ متحدہ عرب امارات سے لی گئیں سیٹلائٹ تصاویر میں صیہونی حکومت کے کم از کم دو باراک ایئر ڈیفنس سسٹمز دکھائے گئے ہیں، جو رپورٹوں کے مطابق ایران سے نام نہاد فضائی دھمکیوں کے مقابلے میں متعدد رینج کے خلاف دفاع کے لیے نصب کیے گئے ہیں۔

جیروزلم پوسٹ کے مطابق، بیٹریاں اس بات کی دلیل ہیں کہ متحدہ عرب امارات میں حساس مقامات کی حفاظت کی غرض سے مزید سسٹمز کے لیے ایک بڑا معاہدہ ہو سکتا ہے جو اس سے پہلے یمن کی عوامی تحریک انصار اللہ کے میزائلوں اور ڈرونز کا نشانہ بن چکے ہیں۔

جیروزلم پوسٹ کے مطابق، متحدہ عرب امارات یمن کی عوامی تحریک انصار اللہ کے خلاف فوجی مہم کا حصہ ہے، جس کے بارے میں مبینہ طور پر دعوی کیا جاتا ہے کہ وہ ایرانی حمایت یافتہ ہے اور حالیہ مہینوں میں کئی بار متحدہ عرب امارات اس کے میزائل اور ڈرون حملوں کا نشانہ بن چکا ہے۔

اس رپورٹ کے مطابق صیہونی حکومت نے اس طرح کے حملوں کے خلاف متحدہ عرب امارات کو مدد کی پیش کش کی تھی اور گزشتہ سال ابوظہبی میں میزائل اور ڈرون حملے کے بعد اس حکومت کے وزیر اعظم نفتالی بینیٹ نے اسرائیلی فوجی افسران کو حکم دیا تھا کہ وہ متحدہ عرب امارات میں اپنے ہم منصبوں کی ہر ممکن مدد کے ساتھ، انہیں مستقبل کے حملوں کے خلاف فوری تحفظ فراہم کریں۔

 

یہ بھی دیکھیں

سوڈانی افواج سول حکومت کو تسلیم کر کے پیشہ وارانہ فرائض انجام دیں، جنرل عبدالفتاح

موغادیشو:جنرل عبدالفتاح البرہان نے کہا کہ مسلح افواج سول حکومت کو تسلیم کر کے اپنی …