بدھ , 7 دسمبر 2022

صومالیہ کا کثیر الجہتی بحران

صومالیہ کے الجھے ہوئے بحران کی جڑ سیاسی-سیکیورٹی اور ماحولیاتی-اقتصادی شعبوں میں تلاش کی جانی چاہیے۔ افریقہ کے اس غریب ملک میں برطانوی، اطالوی اور امریکی استعمار کے علاوہ الشباب گروپ کی طرف سے دہشت گردی کی سہ رخی، یوکرین میں جنگ کی وجہ سے پیدا ہونے والی خشک سالی اور غذائی عدم تحفظ کی گہرائیوں میں اضافہ ہوا ہے۔

افریقی ممالک بالخصوص صومالیہ کا نام ذہن میں آتا ہے تو فوراً غربت اور عدم تحفظ جیسے مسائل ذہن میں آتے ہیں۔ چند روز قبل موغادیشو کے مرکز میں واقع "زوبی” کے چوراہے پر اس ملک کی وزارت تعلیم کے سامنے دو کار بم دھماکوں کا واقعہ دنیا کے میڈیا میں سرفہرست رہا۔ دہشت گردی کا واقعہ جس کے دوران 100 سے زائد افراد ہلاک اور 300 زخمی ہوئے۔

دھماکے کے بعد صومالی پولیس کے ترجمان صادق آدم دودیشی نے ایک پریس کانفرنس کے دوران اعلان کیا کہ دہشت گرد گروپ الشباب نے اس خودکش حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

یہ پہلا موقع نہیں ہے اور یہ آخری موقع نہیں ہو گا کہ براعظم سیاہ کے اس غریب ملک کے بے گناہ لوگ دہشت گردی کا نشانہ بنے۔تقریباً 2 ماہ قبل الشباب کے دہشت گردوں نے "افر اردود” میں متعدد مسافر گاڑیوں کو تباہ کیا تھا۔ بالڈون شہر سے 25 کلو میٹر کے فاصلے پر واقع علاقے میں انہوں نے رک کر شہریوں پر گولیاں برسانا شروع کر دیں جس کے نتیجے میں 20 افراد ہلاک ہو گئے جن میں کچھ خواتین اور بچے بھی شامل تھے اور آٹھ سے زائد فوڈ ٹرکوں کو آگ لگا دی گئی۔

الشباب ایک انتہا پسند دہشت گرد گروہ ہے جو 1991 کے بعد ابھرا جب ملیشیا گروپ صومالیہ میں آمریت کا خاتمہ کرنے میں کامیاب ہوئے۔ کہا جاتا ہے کہ اس گروہ نے اپنی فکری جڑیں سعودی وہابیت سے حاصل کی ہیں۔

الشباب اصل میں عدلیہ یونین حکومت کا یوتھ ونگ تھا، جو 2006 میں مشرقی افریقہ میں ایک مسلم بنیاد پرست ریاست بنانے کے مقصد سے ابھرا اور اسی سال صومالیہ کے دارالحکومت موغادیشو کے بیشتر حصے پر کنٹرول حاصل کر لیا۔ 2011 میں صومالیہ میں افریقی افواج کے ساتھ مل کر اقوام متحدہ کی افواج کے حملے سے قبل اس نے اس ملک کے مرکز اور جنوب کے کچھ حصوں کو بھی کنٹرول کیا تھا۔

2011 میں، اقوام متحدہ کی افواج نے، کینیا اور یوگنڈا کی افواج کے ساتھ، صومالیہ میں الشباب کے طاقت کے مرکز پر حملہ کیا اور اس گروہ کو پیچھے دھکیل دیا۔ تاہم، الشباب اب بھی لڑ رہا ہے اور دہشت گردانہ کارروائیاں کر رہا ہے، اور ایسا لگتا ہے کہ اس دہشت گرد گروہ کے پاس ہزاروں فوجی ہیں۔

صومالی؛ ہمسایہ دشمنوں کے خطرے سے لے کر استعماری طاقتوں کی موجودگی تک

افریقہ ریجن میں چار ممالک صومالیہ، ایتھوپیا، اریٹیریا اور جبوتی شامل ہیں۔ اس خطے کے مسائل میں سے ایک سرحدی اور علاقائی تنازعات اور اس کے نتیجے میں ملکوں کے سرحدی علاقوں میں عدم تحفظ ہے۔ اس عدم استحکام اور سرحدی عدم تحفظ کی صورت میں مختلف عوامل اثرانداز ہوتے ہیں جن میں تاریخ، تاریخی ذہنیت اور حکمران نو آبادیاتی تاریخ کا کردار نمایاں ہے۔

دوسری طرف، صومالیہ کے سرحدی دشمن جیسے ایتھوپیا، کینیا اور جبوتی، جو اس ملک کے لیے پہلے سے طے شدہ دشمنوں کے طور پر فرانس، اٹلی اور انگلستان جیسی پرانی اور نئی نوآبادیاتی حکومتوں نے اس ملک کی اندرونی قومی اور حکومتی کمزوری کی وجہ سے۔ اور وہ اس خطے کا فائدہ اٹھا کر اس قوم کو مزید کمزور کر رہے ہیں اور اس تلخ حقیقت نے اس ملک کی تباہی کی گہرائی میں مزید اضافہ کر دیا ہے۔ مثال کے طور پر صومالیہ کی عبوری حکومت کو ایتھوپیا کی حکومت کی حمایت اور اس ملک کی افواج کو صومالیہ بھیجنا، نیز اسلام پسندوں کے خلاف صومالیہ کی عبوری حکومت کو امریکہ کی جامع حمایت، اس کی وجہ کے بارے میں سوال اٹھاتی ہے۔

یہ غریب افریقی ملک پوری تاریخ میں استعمار کے ہاتھوں ہمیشہ زخمی رہا ہے۔ 1884 میں انگلستان نے صومالیہ کے ایک حصے کو اپنا محافظ بنایا اور 5 سال بعد اٹلی نے اس کے دیگر حصوں کو اپنی کالونی بنا لیا۔ اس دوران انگریزوں کے خلاف محمد بن عبداللہ حسن کی بغاوت جو 1901ء سے 1920ء تک جاری رہی، کہیں بھی نہ پہنچ سکی۔ اقوام متحدہ نے 1950 میں اٹلی سے پوچھا۔ صومالیہ کی آزادی کے لیے زمین فراہم کرنا۔ 26 جون 1960 کو صومالیہ نے انگلینڈ سے اور یکم جولائی 1960 کو اٹلی سے اپنی آزادی کا اعلان کیا۔

اس ملک پر قبضہ امریکی افواج نے 1991 میں کیا تھا یہاں تک کہ ٹرمپ نے 2020 میں اس ملک کو چھوڑنے کا فیصلہ کیا۔ لیکن بائیڈن حکومت کا خیال ہے کہ الشباب کو لاحق خطرے کے پیش نظر "ایک اہم ترجیح” ہے اور اس گروپ سے نمٹنے کے لیے وہاں امریکہ کی "مسلسل” موجودگی ضروری ہے۔

چند ماہ قبل پینٹاگون کے ایک سینیئر اہلکار نے اعلان کیا تھا کہ امریکہ مشرقی افریقہ میں امریکی افواج کو منتقل کرے گا اور صومالی حکومت کے ساتھ مشاورت سے صومالیہ میں امریکی فوجی موجودگی کو بحال کرنے کے لیے کارروائی کرے گا۔

عظیم قحط کی جڑوں کا سراغ لگانا؛ ماحولیات سے یوکرائن کے بحران تک

قرن افریقہ میں شدید خشک سالی کے علاوہ گزشتہ مہینوں کے دوران یوکرین میں جنگ کے معاشی نتائج نے اس جغرافیائی علاقے کے لوگوں کو قحط کے دہانے پر دھکیل دیا ہے۔

اقوام متحدہ کے فوڈ اینڈ ایگریکلچر آرگنائزیشن (FAO) کے سربراہ نے گزشتہ ماہ کے اوائل میں اعلان کیا تھا: "بڑے پیمانے پر انسانی ہمدردی کے ردعمل کے بغیر، آنے والے مہینوں میں صورت حال مزید خراب ہونے کا امکان ہے۔” اگرچہ حالیہ مہینوں میں عالمی زرعی اجناس کی قیمتیں ریکارڈ بلندیوں پر پہنچ گئی ہیں، لیکن کئی ممالک میں مقامی اشیائے خوردونوش کی قیمتیں بلند رہیں اور اگر روس اور یوکرین سے اناج اور کھاد کی ترسیل کو فروغ دینے کے لیے اقوام متحدہ کی ثالثی کی ڈیل ختم ہو جاتی ہے تو اس میں اضافہ ہوتا رہے گا۔ یوکرین اناج کا چوتھا برآمد کنندہ ہے جبکہ روس اناج کا تیسرا اور کھاد کا پہلا برآمد کنندہ ہے۔

اقوام متحدہ کے ورلڈ فوڈ پروگرام کے تعاون سے تیار کردہ FAO کی سہ ماہی ہنگری ایریاز رپورٹ کے مطابق خوراک، ایندھن اور کھاد کی بلند قیمتوں نے ترقی یافتہ معیشتوں کو مالیاتی پالیسیاں سخت کرنے پر مجبور کر دیا ہے۔ رائٹرز کے مطابق اس رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ یہ رجحان مہینوں میں متوقع ہے۔

مستقبل میں غربت میں مزید اضافے اور شدید غذائی عدم تحفظ کے ساتھ ساتھ بڑھتی ہوئی سماجی اور معاشی بے اطمینانی کی وجہ سے بدامنی کے خطرات میں اضافہ ہوگا۔

اندازوں سے پتہ چلتا ہے کہ صومالیہ میں 7.1 ملین افراد، جو 16 ملین کے اس ملک کی آبادی کا تقریباً نصف ہیں، خوراک کی عدم تحفظ کے خطرے سے دوچار ہیں۔ غذائی عدم تحفظ کا مطلب یہ ہے کہ یہ لوگ مشکل سے کم از کم کیلوریز حاصل کر پاتے ہیں جس کی انہیں ضرورت ہوتی ہے اور انہیں زندہ رہنے کے لیے اثاثے بیچنے پڑ سکتے ہیں۔

اقوام متحدہ کے اداروں کے مطابق 2021 کے وسط تک صومالیہ میں خشک سالی کی وجہ سے تقریباً 30 لاکھ مویشی ضائع ہو چکے ہیں۔ یہ اس ملک میں خوراک کی محفوظ فراہمی کو اور بھی مشکل بنا دیتا ہے۔ اقوام متحدہ کے ہیومینٹیرین ریسپانس پروگرام 2022 نے اب تک صومالیہ کو خوراک کی عدم تحفظ سے نمٹنے کے لیے درکار فنڈز کا صرف 18 فیصد فراہم کیا ہے۔

اس صورتحال میں دنیا کے دیگر حصوں میں خوراک کی مہنگائی اور خوراک کی کمی نے صومالیہ کو مالی امداد کے لیے دوسرے کمزور ممالک سے مقابلہ کرنے پر مجبور کر دیا ہے۔ 2011 میں، قحط کے حالات نے صومالیہ میں ایک اندازے کے مطابق 250,000 افراد کو ہلاک کیا۔

مجموعی طور پر، صومالیہ کی موجودہ افسوسناک صورتحال اور بحران کی جڑ دو سیاسی-سیکیورٹی اور ماحولیاتی-اقتصادی شعبوں میں تلاش کی جا سکتی ہے۔ وہ مسائل جنہوں نے ہاتھ ملا کر اس غریب افریقی ملک میں ایک کثیر الجہتی بحران کو ہوا دی ہے، جس کی وجہ سے ہزاروں بے گناہ لوگوں کی جانوں کو خطرہ ہے۔بشکریہ تقریب نیوز

نوٹ:ابلاغ نیوز کا تجزیہ نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

یہ بھی دیکھیں

فلسطین میں روز بروز شدید ہوتی مسلح اسلامی مزاحمت

(تحریر: حسین فاطمی) گذشتہ ہفتے مغربی کنارے کے شہر نابلس کے قریب واقع قصبے حوارہ …