بدھ , 7 دسمبر 2022

اسرائیل:حالیہ انتخابات کے نتیجے میں "فاشسٹوں کا ایک گروہ” ابھر کر سامنے آیا ہے:اولمرٹ

یروشلم:اسرائیل کے سابق وزیر اعظم ایہود اولمرٹ نے کہا ہے کہ وہ کنیسٹ کے حالیہ انتخابات کے نتائج سے پریشان اور مایوس ہیں۔ ان کا کہناہے کہ حالیہ انتخابات کے نتیجے میں "فاشسٹوں کا ایک گروہ” ابھر کر سامنے آیا ہے۔

عبرانی چینل 13 کے ساتھ ایک انٹرویو میں اولمرٹ نے نتائج کو "اسرائیل کے لیے تباہ کن اور سنگین درجے کے خطرناک قرار دیا”۔انہوں نے کہا کہ "فاشسٹ گروپ کے ہر اس شخص کے خلاف ہوں جو ان سے اختلاف کرتا ہے، خواہ عرب، بائیں بازو یا دیگر” کوئی بھی ہو۔انہوں نے خدشہ ظاہر کیا کہ نئی صیہونی حکومت کے موقف اور اقدامات جمہوریت کو غیر مستحکم کریں گے۔

اولمرٹ نے کہا کہ "نیتن یاہو ایک کمزور آدمی ہیں اور وہ بین گویر اور ان کے دوستوں کو مایوس کریں گے کیونکہ نیتن یاہو میں ہمت اور قائدانہ صلاحیت نہیں ہے کہ وہ اپنے وعدوں کا پاس نہیں کرسکتے۔

انہوں نے "بین گویر” کے اقدامات خاص طور پر فلسطینیوں کے خلاف اور پستول کے ساتھ گھومنے اور اسے عوامی مقامات پر گھسیٹنے کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ یہ حرکتیں اسرائیلیوں کے چہروں پرپھٹ جائیں گی۔”

اسرائیل کی نئی حکومت کے دور میں متوقع امریکا کے ساتھ تعلقات کے بارے میں اولمرٹ نے کہا کہ نیتن یاہو وائٹ ہاؤس کے ساتھ براہ راست تنازع میں داخل ہونے سے گریز کرنا چاہیں گے۔

انہوں نے کہا کہ ٹھگ گینگ سے لڑنے کی ضرورت ہے جو اس کی حکومت کا ایک بہت اہم حصہ بنے گا۔ سوال یہ ہے کہ کیا اس کے پاس ایسا کرنے کی طاقت، ہمت اور عزم ہے؟”۔

 

 

یہ بھی دیکھیں

قطر ورلڈ کپ میں فلسطینیوں کی حمایت ’کشنرپیس ‘ اسکیم کی ناکامی کا ثبوت

دوحہ:ایک امریکی ویب سائٹ نے لکھا ہے کہ قطر میں ہونے والے ورلڈ کپ میں …