پیر , 5 دسمبر 2022

’اسرائیل کا بادشاہ ’نیتن یاہو‘ایک بار پھر آرہا ہے‘

ایک بار پھر "نیتن یاہو” کو قابض اسرائیلی ریاست کے بادشاہ کا تاج پہنایا گیا ہے۔ چند روز قبل کنیسیٹ کے انتخابات میں اپنے دائیں بازو کے بلاک کی کامیابی کے بعد اسرائیل کے بڑھتے ہوئے دائیں بازو کے سیاسی منظر نامے کے درمیان نیتن یاھو ایک بار پھر تخت نشین ہونے والے ہیں۔ نیتن یاھو کی آمد کے ساتھ ہی فلسطینیوں کے ساتھ کسی ممکنہ امن معاہدے کی تمام امیدیں بھی دم توڑ گئی ہیں۔

نیتن یاہو اپنی معزولی کے 18 ماہ سے بھی کم عرصے کے بعد وزارت عظمیٰ پر واپس آجائیں گے کیونکہ ان کے کیمپ نے کنیسٹ میں 65 نشستیں حاصل کر لی ہیں۔ یہ تعداد اکثریتی حکومت بنانے کے لیے آسان سمجھی جاتی ہے۔ آگے اسرائیل کے سیاسی حالات کیسے ہوں گے ان کے بارے میں کچھ کہنا قبل از وقت ہے مگر یہ طے ہے کہ تین سال میں پانچ بار اسرائیلی کنیسٹ کے انتخابات کے بعد کسی ایک بلاک کوواضح برتری حاصل ہوئی ہے۔

کنیسٹ کے نئے انتخابات میں حیران کن نتائج میں مذہبی صیہونیت پارٹی نے 14 نشستیں حاصل کیں اور اسرائیل تیسری بڑی پارٹی بن گئی ہے۔ اس کے انتہا پسند لیڈر ایتمار بن غفیر کے آنے والی حکومت میں شامل ہونے کے امکانات ہیں۔ بن غفیرامریکا اور اسرائیل میں دہشت گرد قرار دی گئی ’کاخ‘ کے سینیر رکن ہیں۔

حکومت کی سربراہی کے لیے "نیتن یاہو” کی واپسی تمام آپشنز پر فلسطینیوں کے ساتھ کھلے عام تنازعے کے منظر کو ہوا دینے کا باعث بن سکتی ہے۔ اس سے مغربی کنارے، مقبوضہ یروشلم اور غزہ کا محاصرے میں آبادکاری اور جارحیت کو تقویت ملے گی۔

فاتح کی واپسی

"اسرائیل” کے متوقع وزیر اعظم "نیتن یاہو” نے گذشتہ برسوں میں ان کی راہ میں حائل تمام انتخابی، سیاسی اور عدالتی رکاوٹوں کو پیچھے چھوڑ دیا اور ایک ایسے منظر کے درمیان اقتدار میں واپس آئے جس میں انتہا پسندی مضبوط ہو رہی ہے۔

لیکوڈ نے 32 نشستیں حاصل کیں، مذہبی صیہونیت کو اسموٹریچ اور بین گویر نے 14، شاس 12 اور یونائیٹڈ تورہ یہودیت نے 9 نشستیں حاصل کیں۔ یہ سب جماعتیں نیتن یاھو کے کیمپ میں ہیں۔

دوسری طرف ان کی حزب اختلاف کی پارٹی "دیر اِز اے فیوچر” میں جس کی سربراہی "یائرلیپڈ” کررہے ہیں 23 نشستیں حاصل کیں۔ بینی گینٹزکی سربراہی میں "آفیشل کیمپ” پارٹی کو 12، لائبرمین کی سربراہی میں "اسرائیل بیتونا ” کو 12 نشستیں حاصل ہوئیں۔ 5 نشستیں متحدہ عرب لسٹ جس کی سربراہی "عباس” ہے نے 5 نشستیں حاصل کیں، ڈیموکریٹک فرنٹ اتحاد اور عرب لسٹ نے 4 نشستیں حاصل کیں اور لیبر پارٹی نے 4 نشستیں حاصل کیں۔

سیاسی تجزیہ کار طلال عوکل نے زور دے کر کہا کہ "نیتن یاہو” کو ایک مستحکم حکومت بنانے کے لیے انتہا پسند بلاکس سے باہر اتحاد کی ضرورت نہیں ہوگی اور وہ صہیونی منصوبے کے اہداف کے حصول کے لیے پرعزم ہیں۔

انہوں نے فلسطینی میڈیا سینٹر سے گفتگو کرتے ہوئے مزید کہا: "نیتن یاہو کا اتحاد اسرائیل اور اس کے معاشرے کی نوعیت اور حکمت عملیوں میں خطرناک حد تک اضافہ کر رہا ہے۔ بایاں بازو آہستہ آہستہ ختم ہو رہا ہے، انتہائی دائیں جانب منظر کو چھوڑ کر پہلی بار مذہبی صیہونیت 14 نشستوں کی طاقت کے ساتھ بڑھی ہےجس میں شاس اور حریدیم جیسی جماعتیں شامل ہیں۔

یتن یاہو کو سب سے طاقتور "اسرائیل ہاک” کے طور پر درجہ بند کیا جاتا ہے اور ان کی حکومت سخت گیرسمجھی جاتی ہے۔ ان کی پہلی مدت (1996-1999) یا اس کی دوسری مدت (2009-2021ء) دونوں کے دوران انہیں "اسرائیل” میں سب سے طویل عرصے تک رہنے والے وزیر اعظم بنا دیا۔

تجزیہ کار عوکل کا خیال ہے کہ "نیتن یاہو” کی واپسی تنازع کوایک ایسے مرحلے کی دہلیز پر ڈال دیتی ہے جو فلسطینیوں کے ساتھ نسل پرست، فاشسٹ صیہونیت کا سایہ دار ہو گا۔ اسرائیل کے بین الاقوامی تعلقات کو منفی طور پر گہرا کرے گا اور اسرائیلی معاشرے کے تضادات میں اضافہ ہو گا۔

نیتن یاہو کے زوال کے بعد گذشتہ دو سالوں کے دوران لیپڈ اور بینیٹ حکومت نے القدس اور الاقصیٰ کے مسائل، مغربی کنارے میں کشیدگی، بستیوں کی تقویت، غزہ میں محاصرہ اور جنگوں میں فلسطینی منظر نامے کے خلاف انتہا پسندی اور جارحیت کی مشقوں میں اضافہ ہوگا۔

فلسطین کا منظر

نیتن یاہو کی کاک پٹ میں واپسی کے اثرات فلسطینی منظر نامے میں تیزی سے ظاہر ہوں گے، جو فلسطینی کاز کو کمزور کرنے کے لیے ایک انتہا پسند حکومت کی واپسی سے سب سے زیادہ متاثر ہوتا ہے جو کہ اسرائیل کے ساتھ تعلقات معمول پر آنے کے وقت عرب ایجنڈے سے غائب تھی۔

"نیتن یاہو” نے 1948ء کے فلسطینیوں میں عرب متعصبانہ پوزیشنوں کو تقسیم کرنے میں اہم کردار ادا کیا اور انہیں اس طرح منتشر کیا جس کے منفی اثرات عام طور پر فلسطینی منظر نامے پر اپنے اثر و رسوخ کو کمزور کرنے کی مسلسل کوشش میں گزشتہ انتخابات تک پھیل گئے۔

تجزیہ کار عوکل نے "نیتن یاہو” کی واپسی کو فلسطینیوں کے ساتھ کسی بھی مفاہمتی معاہدے یا امن کوشش کی تباہی ہوگا۔ ان کا کہنا تھا کہ نیتن یاھو کی واپسی کا مطلب یہ ہے کہ امن معاہدے کو دفن کرکے 50 بار الفاتحہ پڑھ لی جائے۔

مسجد اقصیٰ کو یہودیانے کے خطرات اور بڑھ جائیں گے۔ مغربی کنارے پر اسرائیلی قبضہ اور تسلط مزید مضبوط ہوگا اور فلسطینیوں کے حقوق دبانے کے لیے طاقت کے مزید حربے استعمال کیے جائیں گے۔

نیتن یاہو کی سابقہ پالیسی جو مستقبل میں دہرائے جانے کا امکان ہے نے ایک ایسے وقت میں اقتصادی امن کے خیال کو فروغ دینے کی کوشش ایک ایسے وقت میں کی جب غزہ کا محاصرہ، فلسطینی اتھارٹی کا کمزور کرنا، القدس پر حملہ، ایک جامع منصوبہ بندی کے تحت مغربی کنارے اور القدس سمیت فلسطینیوں کے قتل عام کا سلسلہ زور پکڑا۔

تجزیہ کار حبیب کہتے ہیں کہ نیتن یاہو اپنی پالیسی پر عمل کرنے کے لیے واپس آ جائیں گے جو فلسطینی منظر نامے کے اسرار میں اپنے پیشرو "بینیٹ اینڈ لیپڈ” سے زیادہ تجربہ کار ہیں، خاص طور پر مغربی کنارے اور غزہ کے معاملات میں وہ دوسرے سیاسی لیڈروں سے ہٹ کر دیکھتے ہیں۔بشکریہ مرکز اطلاعات فلسطین

یہ بھی دیکھیں

مقبوضہ غربِ اردن میں نوجوان کی ہلاکت کی فوٹیج نے اسرائیل کے طاقت کے استعمال کو ظاہر کر دیا

(ٹام بیٹمین) اسرائیلی فوجیوں کے ہاتھوں جھڑپوں کے دوران فلسطینی نوجوان کی ہلاکت کی فوٹیج …