بدھ , 7 دسمبر 2022

سر درد کی کیا وجوہات ہوسکتی ہیں؟

سر درد آج کل نہایت عام بنتا جارہا ہے تاہم یہ روزمرہ کے معمولات کو شدید متاثر کرتا ہے، بعض افراد سر درد کو ختم کرنے کے لیے مختلف ادویات استعمال کرتے ہیں تاہم لمبے عرصے تک ان کا استعمال نقصان دہ بھی ہوسکتا ہے۔

سر درد کی مختلف وجوہات ہوسکتی ہیں، اگر ان وجوہات کا سدباب کیا جائے تو سر درد اور اس کے لیے لی جانے والی دواؤں سے چھٹکارا مل سکتا ہے۔

اسکرین کے زیادہ استعمال سے ہونے والا سر درد

موجودہ دور میں صحت کے کئی مسائل اسکرین کے زیادہ استعمال سے جڑے ہیں جیسے سر درد اور بینائی کی کمزوری۔چونکہ لوگوں کی اکثریت دفتری اوقات یا فارغ وقت کمپیوٹر یا دوسری اسکرینز کے سامنے گھنٹوں بیٹھ کر گزارتی ہے، ایسی صورت میں جو سر درد سامنے آتا ہے اسے کمپیوٹر وژن کا سر درد کہا جاتا ہے جو سب سے عام سر درد تصور کیا جاتا ہے۔

اس کی بنیادی وجہ وہ تیز روشنی ہے جس کا آپ مسلسل سامنا کرتے ہیں، اپنے کمپیوٹر کو استعمال کرتے وقت یا اس کے بعد سر میں درد ہونے کے علاوہ، آپ اس قسم کی علامات کا بھی سامنا کر سکتے ہیں۔

جیسے دھندلا پن یا دوہرا وژن جیسے بھینگا پن بھی کہا جاتا ہے، آنکھوں میں سرخی کا آجانا، تھکاوٹ اور گردن میں درد وغیرہ۔اس سر درد کا سامنا ہونے کی صورت میں اسکرین کا استعمال کم سے کم کریں، اور کمپیوٹر استعمال کرتے ہوئے بار بار وقفہ لیں۔

جائنٹ سیل آرٹرائٹس سر درد

اگر آپ کے سر درد کے نوعیت ایسی ہے کہ جس میں سر درد کے ساتھ جبڑے میں بھی درد محسوس ہو، تو یہ جائنٹ سیل آرٹرائٹس کی علامت ہو سکتی ہے جبکہ اس کی دیگر علامات میں وزن میں کمی، دھندلا یا دوہرا وژن، بخار اور کھوپڑی کا نرم ہوجانا شامل ہیں۔

یہ سر درد اس وقت ہوتا ہے جب شریانوں کی بیرونی سطح پر سوجن پیدا ہونے لگتی ہے، اس سر درد کا سامنا عموماً ایسے افراد کرتے ہیں جن کی عمر کم از کم 50 برس یا اس سے زائد ہوتی ہے۔

اگرچہ یہ ایک سنگین بیماری ہے، تاہم درست ادویات کے استعمال سے اس کا علاج ممکن ہے، اسے نظر انداز کرنے کی صورت میں بینائی کو مستقل نقصان بھی پہنچ سکتا ہے۔

سروائیکو جینک سر درد

اگر اپ کا سر درد گردن اور کھوپڑی کے درمیان سے شروع ہوتا ہے تو یہ سروائیکو جینک سر درد ہوسکتا ہے، ایسا اس وقت ہوتا ہے جب آپ زیادہ وقت تک ایک ہی پوزیشن میں زیادہ تر وقت جھکے رہتے ہیں جس کے نتیجے میں سروائیکل اسپائن یا C2 جنکشن جام ہوجاتا ہے جو سر درد کی صورت میں سامنے آتا ہے۔

اس درد کے ساتھ جو علامات سامنے آتی ہیں ان میں گردن کے درمیان میں درد ہونا، جکڑن محسوس ہونا، گردن کے پٹھوں میں تکلیف ہونا، سینے کے پٹھوں میں تناؤ اور کندھوں کے ایک حصے میں سختی محسوس ہونا شامل ہے۔اس سے نجات کے لیے مساج ایک بہترین حل ہے جو پٹھوں کو آرام دینے میں مدد فراہم کرتا ہے۔

 

یہ بھی دیکھیں

پاکستان سے 2023 کے آخر تک پولیو کا خاتمہ ہو جائے گا، یونیسیف

اسلام آباد:یونیسیف کے ریجنل ڈائریکٹر برائے جنوبی ایشیا جارج لاریہ ایڈجی نے کہا ہے کہ …