منگل , 29 نومبر 2022

لبنان کی فوج،عوام اور مزاحمت:قومی حقوق،خود مختاری کا ضامن

بیروت:لبنان میں مزاحمتی تحریکوں یعنی حزب اللہ نے بہت سی مختلف سطحوں پر عظیم کامیابیاں حاصل کی ہیں جس سے لبنان میں استحکام اور سلامتی آئی ہے۔ تمام فوجی فتوحات ‘اسرائیلی’ دشمن کے خلاف حاصل کی گئیں، اور حال ہی میں شام اور لبنان میں تکفیری دہشت گردوں کے خلاف کامیابی بھی شامل ہے۔

لبنانی فوج کے ساتھ مسلسل ہم آہنگی کے ساتھ تمام عسکری مہارت نے فاتحانہ مساوات: فوج، عوام اور مزاحمت کو مضبوط اور گہرا کر دیا ہے۔

اس مساوات نے لبنان کی خودمختاری، حفاظت اور استحکام کو یقینی بنانے کے لیے ایک قابل ذکر کامیاب فارمولے کے طور پر کام کیا ہے جس سے ملک اور اس کے عوام کو خطرات لاحق ہیں۔

یہ مساوات قائم ہونے سے پہلے کبھی بھی لبنان اپنی حقیقی خودمختاری کا دعویٰ کرنے کے قابل نہیں تھا۔ اصطلاح کا مکمل احساس اس فارمولے کے وجود میں آنے کے بعد ہی مجسم ہوا ہے۔ خاص طور پر، 2000 میں مزاحمت نے ‘اسرائیلی’ دشمن کو پیچھے ہٹنے پر مجبور کرنے کے بعد، لبنان اور لبنانی حقیقت میں اپنی خودمختاری کا استعمال کرنے کے قابل ہو گئے ہیں۔

مثال کے طور پر، لبنانی، خاص طور پر جنوبی، کبھی بھی اپنی زمینوں اور کھیتوں تک نہیں پہنچ سکے، ‘اسرائیلی’ قابض فوجی کسانوں کے خلاف گولیاں چلاتے تھے اور انہیں ان کی زمینیں لگانے یا فصل کاٹنے سے روکتے تھے۔

لبنانی فوج کو بھی سنہ 2000 سے پہلے کبھی بھی فلسطینی سرحد کے ساتھ لبنان کے جنوبی حصے میں اپنی افواج کو تعینات کرنے کے اپنے خود مختار حق کا استعمال کرنے کی اجازت نہیں دی گئی۔ اس کے برعکس ‘اسرائیلی’ قبضے نے اپنی مسلسل جارحیت کو چھوڑ کر ایک پراکسی ملیشیا قائم کر کے لبنان کو چیلنج کیا ہے جسے حلیفوں کی ملیشیا کہا جاتا ہے۔ ‘اسرائیلی دشمن ان کے وجود کو قانونی شکل دینے کی کوشش میں انہیں ‘جنوبی لبنان آرمی’ کہتا تھا، اس طرح لبنانی حکومت کو چیلنج کرتا تھا اور فوج کی قانونی حیثیت پر مشتمل تھا۔

اب مزاحمت نے اس مقدس مساوات کے مینڈیٹ کو ایک نئے میدان یعنی اقتصادی میدان میں بڑھا دیا ہے۔

ایک حالیہ اور حیران کن کامیابی میں، لبنانی ریاست مزاحمت کی طرف سے مسلط ڈیٹرنس کے توازن کے ساتھ، مقبوضہ فلسطین کے ساتھ اپنی سمندری حدود میں لبنان کے حقوق کو برقرار رکھنے میں کامیاب رہی ہے۔

سمندری حدود کی یہ حد بندی لبنان کو دیتی ہے، لبنانی حکومت کے مطابق، سمندری تیل اور گیس کے وسائل میں اس کے حقوق ایک اور قابل ذکر کامیابی ہے جو لبنان کے خود مختار فیصلے اور زمینی اور سمندر میں اپنے علاقوں پر ریاستی خودمختاری اور حکمرانی کو مضبوط کرتی ہے۔

آخر میں، یہ واضح ہے کہ جب تک مزاحمت، لبنانی فوج اور عوام کی حمایت کے درمیان یہ ہم آہنگی اور ہم آہنگی برقرار ہے، کوئی بھی بیرونی دشمن یا طاقت لبنان کو دھمکی یا اس کے حقوق کو بلیک میل نہیں کر سکتی۔

اس فارمولے کے ذریعے لبنان کی خودمختاری کا تحفظ اور تحفظ کیا جا رہا ہے جو کہ موجود ہونا چاہیے اور اسے برقرار رکھا جانا چاہیے۔یہ ہماری قومی ڈھال ہے جس پر ہمیں ہمیشہ قائم رہنا چاہیے، اور ہم ضرور کریں گے!

یہ بھی دیکھیں

اسرائیل سعودیہ تعلقات:بن سلمان آگ سے کھیل رہے ہيں،امریکی جریدہ "نیشنل انٹرسٹ”

ریاض:ایک امریکی جریدے نے اپنی ایک رپورٹ میں لکھا ہے کہ اسرائیل کے ساتھ سعودی …