جمعرات , 8 دسمبر 2022

سعودی عرب ترک بینک میں اربوں ڈالر کیوں جمع کروا رہا ہے؟

ریاض:سعودی وزیر خارجہ کے ترجمان نے بتایا ہے کہ سعودی ترک کے مرکزی بینک میں پانچ ارب ڈالر جمع کراونے کے حوالے سے بات کررہی ہے۔سعودی میڈیا کے مطابق ترکی میں افراط زر کی شرح 85 فیصد سے زیادہ ہو جانے کے سبب ملکی معیشت بری طرح دباؤ کا شکار ہے۔ ایسے میں سعودی عرب کی طرف سے رقم جمع کرانے سے ترکی کے زرمبادلہ کے ذخائر میں اضافہ کرنے میں مدد مل سکتی ہے۔

سعودی وزارت خارجہ کو بھیجی گئی ای میل کے جواب میں ترجمان نے بتایا کہ ترکی کی مرکزی بینک میں پانچ ارب ڈالر جمع کرانے کے سلسلے میں مشاورت آخری مراحل میں ہے۔

دوسری جانب ترکی کے مرکزی بینک نے اس سلسلے میں فی الحال کوئی بات کرنے سے انکار کیا ہے۔ تاہم اس بات چیت سے باخبر ایک ترک عہدیدار نے بتایا کہ سعودی عرب کی جانب سے رقم جمع کروانے کے لیے معاہدے پر بات چیت آخری مرحلے میں ہے۔

اس کے علاوہ تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ سعودی عرب کی طرف سے رقم جمع کروانے سے اگلے برس جون میں ہونے والے انتخابات سے قبل ترکی کے صدر رجب طیب ایردوآن کو اپنے لیے عوامی حمایت میں اضافہ کرنے میں مدد مل سکتی ہے۔

اگر یہ معاہدہ ہوجاتا ہے تو یہ اس بات کا بھی مظہر ہوگا کہ دونوں ملکوں کے درمیان کئی بر س سے جاری کشیدگی کے خاتمے کے بعد دو طرفہ تعلقات بحال ہو چکے ہیں۔

 

یہ بھی دیکھیں

افغانستان میں دہشت گرد دوبارہ منظم ہوئے تو کارروائی کریں گے، امریکا

واشنگٹن:امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان نیڈ پرائس کا کہنا ہے کہ محسوس ہوتا ہے کہ …