جمعہ , 3 فروری 2023

بھوک افغان بچوں کا ڈراؤنا خواب

امریکہ اور نیٹو افواج کے افغانستان پر دو دہائیوں کے قبضے کا نتیجہ غربت اور عدم تحفظ ہے۔ وہ حالات جن کی وجہ سے بعض خاندانوں نے خود کو بھوک سے بچانے کے لیے غیر معمولی اقدامات کیے ہیں، جیسے کہ بچوں کو نیند کی گولیاں کھلانا، جسم کے اعضاء بیچنا، اور کم عمر لڑکیوں کی شادی کرنا۔

حال ہی میں مختلف میڈیا میں خبریں آئی ہیں کہ کچھ افغان شہری انتہائی غربت کی وجہ سے اپنی بیٹیاں اور جسم کے اعضاء فروخت کر دیتے ہیں تو کچھ اپنے بھوکے بچوں کو نیند کی گولیاں دے کر پرسکون کرتے ہیں۔ ایک ایسا مسئلہ جو اس جنگ زدہ ملک میں ایک گہرے اور بڑھتے ہوئے انسانی بحران کی نشاندہی کرتا ہے، جس کی جڑیں اس ملک پر انسانی حقوق کے دعویداروں بالخصوص امریکہ کے 20 سالہ قبضے میں پیوست ہیں۔

افغانستان میں امریکی پالیسیوں کی وجہ سے پیدا ہونے والے حالات کے ساتھ ساتھ یہ پیشین گوئی کی گئی ہے کہ قدرتی آفات کا سلسلہ بہت سے افغانوں کے لیے مشکل موسم سرما کا سبب بنے گا جو معاشی بدحالی کا شکار ہیں۔

بین الاقوامی اداروں کی رپورٹ کے مطابق اس سال افغان آبادی کے 60 لاکھ سے زائد افراد جن میں خواتین اور بچے بھی شامل ہیں کو شدید قحط کا سامنا کرنے کا خدشہ ہے۔

درحقیقت امریکہ میں افغان بچوں کے متاثرین کے یہ اعدادوشمار افغانستان میں معاشی بحران، خشک سالی اور نئی پابندیوں کے متاثرین کے بارے میں چائلڈ پروٹیکشن آرگنائزیشن کی شائع کردہ رپورٹ سے مختلف ہیں۔

بچوں کے تحفظ کے لیے کام کرنے والی تنظیم کی رپورٹ میں، جو 19 اگست کو افغانستان سے امریکی انخلاء کے ایک سال مکمل ہونے کے موقع پر "بریکنگ پوائنٹ: لائف فار چلڈرن” کے نام سے شائع ہوئی تھی، یہ ظاہر کرتی ہے۔ 26% افغان لڑکیوں میں ڈپریشن کی علامات پائی جاتی ہیں،پچھلے سال افغانوں نے خاندان کی مالی حالت بہتر بنانے کے لیے شادی کا مطالبہ کیا۔

بہت سے معاشی مسائل کے پیش نظر اب افغانستان کے مختلف حصوں میں کم عمر لڑکیوں کی شادی ایک عام سی بات بن گئی ہے اور کچھ لڑکیاں اپنی بیٹیوں کو کھانے کے لیے بیچ رہی ہیں! اس سکینڈل کا ذمہ دار کون ہے؟

کئی بچوں نے چائلڈ پروٹیکشن آرگنائزیشن کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا ہے کہ خراب معاشی صورتحال اور مناسب خوراک کی کمی بچوں کی شادیوں میں اضافے کا سبب بنی ہے اور اس سے لڑکوں کے مقابلے لڑکیاں زیادہ متاثر ہوتی ہیں۔

کچھ عرصہ قبل، چلڈرن پروٹیکشن انسٹی ٹیوٹ کے فوڈ سیکیورٹی پروجیکٹ کے کوآرڈینیٹر احمد شاہ امین زئی نے افغانستان میں بچوں کی انسانی صورتحال کو تشویشناک قرار دیتے ہوئے کہا تھا کہ افغانستان میں لاکھوں (80% سے زائد) بچے ہر رات بھوکے سوتے ہیں۔ .

چلڈرن پروٹیکشن انسٹی ٹیوٹ، جو افغانستان میں 46 سالوں سے کام کر رہا ہے، یہ اعلان کرتے ہوئے کہ افغانستان میں غذائی قلت کا سامنا کرنے والے بچوں کی تعداد تقریباً 40 لاکھ تک پہنچ گئی ہے، عالمی برادری سے مطالبہ کرتا ہے کہ وہ انسانی بحران پر قابو پانے کے لیے افغانستان کے لیے اپنی امداد میں اضافہ کرے۔ اس ملک میں جو بچوں کو بہت کمزور بناتا ہے، اسے کم کیا جائے۔

قبل ازیں اقوام متحدہ کے بچوں کے فنڈ (یونیسیف) نے اعلان کیا تھا کہ طالبان کے افغانستان پر دوبارہ کنٹرول حاصل کرنے کے ایک سال سے زائد عرصے کے بعد بھی 13 ملین افغان بچوں کو انسانی امداد کی ضرورت ہے۔

17 اگست کو امریکی سی بی ایس نیوز ٹی وی چینل نے بھی اپنی ویب سائٹ پر لکھا کہ طالبان کے زیر کنٹرول افغانستان میں ہر روز غذائی قلت کے شکار بچوں کی تعداد میں اموات ہوتی ہیں۔

سی بی ایس نیوز کی ایک رپورٹ میں، یہ اندازہ لگایا گیا ہے کہ 90 فیصد افغان خاندانوں کے پاس کھانے کے لیے کافی خوراک نہیں ہے، جس سے زیادہ تر بچے متاثر ہوتے ہیں۔

سیو دی چلڈرن کے ایک نئے سروے سے پتا چلا ہے کہ گزشتہ 30 دنوں میں 5 میں سے 4 بچے بھوکے سو گئے ہیں۔ اشیائے خوردونوش کی قیمتیں بڑھنے سے مایوس والدین اپنے بچوں کو اسکول کے بجائے کام پر بھیج دیتے ہیں۔

اس سے صرف ان 10 ملین میں اضافہ ہوگا جو پہلے ہی تعلیم چھوڑنے کے خطرے میں ہیں، جن میں وہ لڑکیاں بھی شامل ہیں جنہیں زیادہ تر خطوں میں چھٹی جماعت سے آگے تعلیم حاصل کرنے سے روک دیا گیا ہے۔

دوسری جانب یہ پیشین گوئی کی گئی ہے کہ جن 1700 افغان بچوں کو زبردستی امریکا منتقل کیا گیا، امریکی حکومت کی جانب سے ان کے درست اعدادوشمار کے اعلان میں غیر یقینی صورتحال کے باعث، اس میں کوئی شک نہیں کہ ان میں سے ایک بڑی تعداد غلامی کے جال میں پھنسے ہوئے ہیں۔ جدید دور میں پکڑے جائیں، جس میں جبری مشقت، جنسی اسمگلنگ یا جبری شادی شامل ہے۔

بہرصورت، افغانستان میں امریکہ کے اب تک کے اقدامات کا اس ملک میں انسانی حقوق کی صورتحال کو مزید خراب کرنے کے علاوہ کوئی نتیجہ نہیں نکلا، خاص طور پر بچوں کے خلاف۔

دریں اثنا، مغربی میڈیا اور مغرب کے زیر کنٹرول کچھ انسانی حقوق کی تنظیمیں اب بھی کوشش کر رہی ہیں کہ اپنی پیشہ وارانہ سرگرمیوں کے دوران افغان عوام کے خلاف ان امریکی جرائم کا ذکر نہ کریں۔

امریکیوں نے نہ صرف افغان خواتین اور بچوں کے مصائب پر آنکھیں بند کر رکھی ہیں جس کا آغاز انہوں نے خود کیا تھا بلکہ افغانستان کے مرکزی بینک کے اثاثوں سے 7 ارب ڈالر اپنے بینکوں میں منتقل کرنے سے بھی انکار کر دیا ہے۔ یہ رقم موجودہ حالات میں پہلے سے کہیں زیادہ بحران پر قابو پانے میں مدد دے سکتی ہے جب افغانستان کے بینکوں کا بیلنس بہت کم ہو چکا ہے اور ملکی معیشت کی دیوار گرنے کی آواز سنائی دے رہی ہے۔بشکریہ تقریب نیوز

نوٹ:ابلاغ نیوز کا تجزیہ نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

یہ بھی دیکھیں

مقابلہ برائے ’سیاسی غلطیاں‘

(مظہر عباس) لگتا ہے وزیراعظم شہباز شریف کو اب یقین سا ہوچلا ہے کہ وہ …