اتوار , 5 فروری 2023

کیا سعودی عرب اب امریکہ کے بجائے چین جیسے نئے اتحادیوں کی تلاش میں ہے؟

(فیصل محمود علی)

چینی صدر شی جن پنگ سعودی عرب پہنچ رہے ہیں جہاں وہ چین خلیجی ممالک کے سربراہی اجلاس میں شرکت کریں گے۔ چھ سال بعد اپنے سعودی عرب کے دورے کے دوران شی جن پنگ شاہ سلمان بن عبدالعزیز اور شہزادہ محمد بن سلمان سے بھی ملاقات کریں گے۔

شی جن پنگ نے سنہ 2016 میں سعودی عرب، ایران اور مصر کا دورہ کیا اور ان کے درمیان سفارتی معاہدوں پر دستخط بھی ہوئے۔خبر رساں ایجنسی شنوا کے مطابق چین نے اب تک عرب ممالک اور عرب لیگ کے ساتھ 12 سفارتی معاہدے کیے ہیں۔

20 عرب ممالک، عرب لیگ اور چین کے درمیان بیلٹ اینڈ روڈ پروجیکٹ کو مشترکہ طور پر تیار کرنے کا معاہدہ بھی کیا گیا ہے۔ توانائی اور انفراسٹرکچر کے شعبے میں 200 منصوبے مکمل کیے گئے ہیں۔

سنہ 2021 میں چین اور عرب ممالک کے درمیان 330 ارب ڈالر کی مشترکہ تجارت ہوئی جو گزشتہ سال کے مقابلے میں 37 فیصد زیادہ ہے۔

خلیجی ممالک کے سربراہی اجلاس میں توانائی سے سیکیورٹی اور سرمایہ کاری تک تقریباً 29 ارب ڈالر کے معاہدوں پر بات ہوئی ہے۔ شی جن پنگ کے دورہ سعودی عرب کو موجودہ بین الاقوامی منظر نامے میں بہت اہم سمجھا جا رہا ہے۔

خاص طور پر روس اور یوکرین کے درمیان جاری جنگ اور تیل کی قیمتوں پر ہونے والی تبدیلی کے حوالے سے چین کے صدر شی جن پنگ کے دورہ سعودی عرب سے تیل کے بحران سے دوچار امریکہ کی تشویش بڑھ سکتی ہے۔

امریکہ اور سعودی عرب کے درمیان ‘تیل کے تحفظ’ پر مبنی تقریباً سات دہائیوں پرانے تعلقات حالیہ دنوں میں یوکرین میں جنگ اور خام تیل کی سپلائی پر انتہائی کشیدہ ہیں۔ امریکی صدر جو بائیڈن نے چند ماہ قبل یہاں تک کہا تھا کہ سعودی عرب کو تیل میں کٹوتی کے نتائج بھگتنا ہوں گے۔ لیکن اس کے باوجود تیل پیدا کرنے والے ممالک کی تنظیم اوپیک پلس نے سپلائی کم کرنے کے اپنے فیصلے میں کوئی تبدیلی نہیں کی۔ تیل کی کم سپلائی کے باعث عالمی منڈی میں خام تیل کی قیمتیں بڑھ رہی ہیں اور اس کا اثر مغربی ممالک پر پڑ رہا ہے۔

اس کے ساتھ یہ بھی سمجھا جاتا ہے کہ تیل کی بڑھتی ہوئی قیمتوں کی وجہ سے روس پر اقتصادی پابندیوں کے باوجود خریداری جاری ہے جس کی وجہ سے اسے یوکرین میں جنگ جاری رکھنے کے لیے پیسے مل رہے ہیں۔

سعودی عرب کی حکمت عملی
چینی صدر شی جن پنگ کے دورہ سعودی عرب پر بین الاقوامی امور کے ماہر فضل الرحمان نے بی بی سی کو بتایا کہ یہ سب سعودی عرب کی حکمت عملی کا حصہ ہے کہ وہ امریکا سے آگے دیکھے اور تیل پر انحصار کم کرے۔

کئی عرب ممالک میں انڈین سفیر کے طور پر کام کرنے والے انیل تریگنایت کا کہنا ہے کہ یہ سعودی عرب کی مشرق کو توجہ کا مرکز بنانے کی پالیسی کا حصہ ہے، جس کے تحت وہ چین، انڈیا، جاپان جیسے ممالک کے ساتھ تعلقات کو مضبوط بنا رہا ہے۔

خبر رساں ادارے روئٹرز نے اپنی ایک رپورٹ میں کہا ہے کہ عرب چین سربراہی اجلاس کے لیے خلیجی اور شمالی افریقہ کے رہنماؤں کو پہلے ہی دعوت نامے بھیجے جا چکے ہیں۔

سربراہی اجلاس کی صدارت شاہ سلمان اور ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کریں گے اور اقتصادی تعاون اور ترقی کو مضبوط بنانے کے امور پر تبادلہ خیال کیا جائے گا۔

چین کے سرکاری اخبار گلوبل ٹائمز نے چینی وزارت خارجہ کی طرف سے جاری کردہ ایک رپورٹ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ’چین اس دورے کو عرب ممالک کے ساتھ روایتی تعلقات کو آگے بڑھانے، تمام شعبوں میں تعلقات کو مضبوط اور گہرا کرنے، دونوں ثقافتوں کے درمیان تبادلوں کو فروغ دینے، اور چین کے دورے کو ایک موقع کے طور پر استعمال کرے گا۔

مستقبل کو ذہن میں رکھتے ہوئے چینی عرب کمیونٹی کی تعمیر کریں۔

گذشتہ ماہ کے اعدادوشمار کے مطابق سعودی عرب نے سب سے زیادہ خام تیل چین کو فراہم کیا۔ چین سعودی عرب کو اس بات پر بھی قائل کرنے کی کوشش کر رہا ہے کہ کچھ تجارت کے لیے ادائیگی کی کرنسی ڈالر کی بجائے چینی کرنسی یوآن میں ہونی چاہیے۔

خلیجی ممالک بالخصوص سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کی طرف سے امریکہ سے آگے دیکھنے اور نئے مواقع تلاش کرنے کی بہت سی وجوہات بتائی جا رہی ہیں۔

ان میں ضمانتوں کے باوجود عرب ممالک کو سیکورٹی (ایران سے) فراہم کرنے میں ناکامی اور افغانستان، ایران، شام اور لیبیا میں امریکی خارجہ پالیسی کی ناکامیاں شامل ہیں۔

فضل الرحمان کا کہنا ہے کہ جس طرح امریکا نے پرانے اتحادیوں مصر کے حسنی مبارک اور تیونس کو جھنجھوڑ کر چھوڑا، اس کے بعد عرب ممالک میں امریکا پر اعتماد کا فقدان ہے۔

دوسری بات یہ ہے کہ ایران کے حمایت یافتہ باغیوں نے جس طرح سعودی عرب اور دیگر ممالک میں متواتر حملے کیے ہیں اس سے انھیں یہ محسوس ہونے لگا ہے کہ امریکہ انھیں ایران سے مکمل طور پر محفوظ نہیں رکھ سکتا۔ اس تناظر میں باراک اوباما کے دور حکومت میں ایران کے ساتھ جوہری معاہدے نے بھی کردار ادا کیا۔

امریکہ جس طرح راتوں رات افغانستان سے نکلا اس نے اس اعتماد کو مزید متزلزل کرنے کا کام کیا اور امریکہ ہر قسم کے بیانات کے بعد بھی اسے دوبارہ قائم نہیں کر پا رہا۔

جولائی میں سعودی عرب کے دارالحکومت ریاض کے دورے کے دوران جو بائیڈن نے کہا تھا کہ امریکہ کہیں نہیں جا رہا ہے۔ امریکی صدر نے کہا تھا کہ ‘ہم یہاں خالی جگہ نہیں چھوڑیں گے کہ چین، روس اور ایران اس سے فائدہ اٹھائیں، امریکہ کہیں نہیں جا رہا’۔

دریں اثنا سنہ 2018 میں صحافی جمال خاشقجی کے قتل کے مقدمے میں بھی شہزادہ محمد بن سلمان کو محفوظ رستہ مل گیا ہے۔ لیکن امریکہ کی تمام تر کوششوں کے بعد بھی پرانی دوستی پر دھول پڑتی دکھائی دے رہی ہے۔

سابق سفیر انیل تریگنیت کے مطابق چین اور عرب ممالک کی دوستی تیل کی سپلائی سے بہت آگے نکل گئی ہے اور اب اسلحے اور فوجی سامان کی خریداری تک جا چکی ہے۔

خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات نے چین کے ساتھ فوجی سازوسامان کا معاہدہ کیا ہے۔ سعودی عرب نے ایک چینی کمپنی سے مسلح ڈرون بنانے کا معاہدہ کیا ہے۔

سعودی عرب کے بارے میں کہا جا رہا ہے کہ یہ تمام تبدیلیاں اس کے وژن 2030 اور نیشنل ٹرانسفارمیشن پروگرام 2020 کا حصہ ہیں۔نیشنل ٹرانسفارمیشن پروگرام سال 2016 میں شروع کیا گیا تھا۔ کہا جاتا ہے کہ یہ سب ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کی نگرانی میں چل رہے ہیں۔

یہ شاید محض اتفاق نہیں ہے کہ صدر شی جن پنگ کے جدہ پہنچنے سے صرف ایک روز قبل عرب نیوز نے سندھالا نامی جزیرے کو سیاحتی مقام کے طور پر ترقی دینے کی خبر نمایاں طور پر شائع کی تھی۔

حکومت کے حوالے سے کہا گیا ہے کہ اس سے 3500 لوگوں کو روزگار ملے گا۔شمال مغربی سعودی عرب میں نیوم نامی شہر کی ترقی کے لیے پہلے ہی کام جاری ہے۔

باشعور لوگ یہ سب کچھ سعودی عرب کی خام تیل پر انحصار کو مکمل طور پر کم کرنے کی کوششوں کے طور پر دیکھتے ہیں، جس میں وہ اپنے فنڈز کی مدد سے تعمیرات، سیاحت، ہتھیار سازی میں طاقت حاصل کرنا چاہتا ہے۔

فضل الرحمان کا کہنا ہے کہ چین ان معاملات میں ان کی مدد کر سکتا ہے اور یہی وجہ ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان تعلقات مزید مضبوط ہو رہے ہیں۔

ان کے بقول سعودی عرب اس تصویر سے بھی باہر نکلنے کی کوشش کر رہا ہے جس میں اسے ایک مخصوص مذہب کے رہنما تک محدود رکھا گیا ہے۔ شہزادہ سلمان تیل کی دولت کی مدد سے اپنی علاقائی، سفارتی اور سیاسی رسائی کو مضبوط کرنا چاہتے ہیں۔ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے انتہائی کم عمری میں اقتدار کی باگ ڈور سنبھالی ہے۔

فضل الرحمان کہتے ہیں کہ ’سعودی عرب میں یہاں پہنچنے کا عام وقت 60-70 سال رہا ہے۔ اس کے پاس بھی کرشمہ ہے لیکن اس کا مسئلہ قطر سے پیدا ہو سکتا ہے جسے آج کل مغربی ممالک آگے بڑھانے کی بھرپور کوشش کر رہے ہیں۔

چین کا مسئلہ اس معاملے میں سعودی عرب اور ایران کو ساتھ لینے میں ہوگا۔ اقتصادی پابندیوں کے بعد بھی چین نے ایران سے تیل خریدنے کا سلسلہ جاری رکھا ہوا ہے۔ ساتھ ہی وہ ایران پر سے پابندیاں ہٹانے اور جوہری معاہدے کی بحالی کے مطالبے پر بھی بات کرتے رہے ہیں۔بشکریہ بی بی سی

نوٹ:ابلاغ نیوز کا تجزیہ نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

 

یہ بھی دیکھیں

سیاسی جماعتوں کی ایک دوسرے کیخلاف انتقامی کارروائیاں

لاہور: (فرخ احمد ) پاکستان میں ہر سیاسی پارٹی خود کو حکومت میں ہی محفوظ …