ہفتہ , 4 فروری 2023

او آئی سی اجلاس : اسرائیلی وزیر کے مسجد اقصٰی کے دورے کی مذمت

جدہ :  اسلامی تعاون تنظیم(او آئی سی) نے مسجد اقصیٰ کے حوالے سے اسرائیلی وزیر کی اشتعال انگیز ی کی مذمت کرتے ہوئے مسئلہ فلسطین کی مرکزی اہمیت کا اعادہ کیا ہے۔

خبر رساں ادارے کے مطابق مسجد اقصٰی پر اسرائیلی حملے پر اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) کے سیکرٹری جنرل کی زیر صدارت ہنگامی اجلاس میں مسجد اقصیٰ اور القدس شریف کے خلاف اسرائیلی پالیسیوں اور قدامات کو مسترد کرتے ہوئے انہیں اشتعال انگیز قرار دیا گیا۔

اجلاس میں کہا گیا کہ القدس شریف پوری اسلامی امہ کے دل کے قریب تر ہے ، غیر معمولی اجلاس کے اختتام پر او آئی سی کی طرف سے 17 نکاتی اعلامیہ جاری کیا گیا جس میں اسرائیلی پالیسیوں اور اقدامات کی مذمت کے ساتھ ساتھ مسلم ممالک ، عالمی اداروں ، تنظیموں ، مذہبی رہنمائوں اور انسانی حقوق کے اداروں کی توجہ اس اہم معاملے کی طرف دلائی گئی ہے ۔

جاری اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ اسرائیل کے وزیر برائے قومی سلامتی ایتامار بن یویرکا مسجد اقصیٰ کا دورہ اشتعال انگیز کارروائی ہے جو قابل مذمت ہے اور اس طرح کی کوئی بھی متعصبانہ کارروائی قابل قبول نہیں ، اسرائیلی حکومتی عہدیدار، فوجی حکام، سب اشتعال انگیزی، فلسطینیوں کے حقوق کی پامالی اور بین الاقوامی قوانین کی خلاف ورزی کے مرتکب ہوتے ہیں ، اس طرح کی خلاف ورزیوں کی مثال نہیں ملتی۔

اعلامیے میں اسلامی تعاون تنظیم نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل سے مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ بین الاقوامی امن اور سلامتی کی ضامن کے طور پر اپنی ذمہ داری نبھاتے ہوئے اسرائیل کے خلاف ضروری کارروائی کرے۔او آئی سی نے اسرائیل کی طرف سے فلسطینیوں کے خلاف عائد کردہ حالیہ پابندیوں کی بھی مذمت کرتے ہوئے تمام مذہبی رہنماؤں اوربین الاقوامی حکام سے اپیل کی کہ اسرائیل کے خطرناک عزائم کا ادارک کرتے ہوئے اس کے خلاف سخت موقف اختیار کریں۔واضح رہے کہ 3 جنوری کو اسرائیلی وزیرِ قومی سلامتی ایتمار بن گویر نے سخت سیکیورٹی میں مسجد الاقصیٰ کا اشتعال انگیز دورہ کیا تھا۔

یہ بھی دیکھیں

بھارت نے 5 سالوں میں 24 ارب ڈالر کے جنگی ہتھیار خرید لیے

نئی دہلی: بھارت کا جنگی جنون کم نہ ہوا۔ بھارت نے 5 سالوں میں 24 …