بدھ , 1 فروری 2023

اسرائیلی فوج نئی نیتن یاہو حکومت پر فکر مند کیوں ہے؟

اسرائیل کے دائیں بازو کے لیکود رہنما بنجمن نیتن یاہو نے ملکی تاریخ کی سب سے زیادہ انتہاپسندوں کے زیر تسلط حکومت کے وزیر اعظم کے طور پر حلف اٹھایا، جس نے نہ صرف مغربی دارالحکومتوں بلکہ اسرائیلی فوج کے ہیڈ کوارٹر میں بھی سوال اٹھا دیئے۔

نیتن یاہو کو ایک حالیہ "سخت” پیغام میں، جسے اسرائیلی میڈیا پر لیک کیا گیا، اسرائیلی فوج کے چیف آف اسٹاف ایویو کوچاوی نے اس وقت کے نامزد وزیر اعظم کو اپنے انتہائی دائیں بازو کے اتحادیوں کے فوج کے تنظیم نو کے منصوبوں کے حوالے سے اپنے تحفظات سے آگاہ کیا۔

اسرائیل کے سپہ سالار اعلٰی نے نیتن یاہو کے حوالے سے کہا کہ "جو تبدیلیاں لانے پر رضامندی ظاہر کی گئی ہے اس سے کمانڈ کا سلسلہ ٹوٹ جاتا ہے اورجنرل سینٹرل کمانڈ کے جنرل کی خودمختاری اور [مغربی کنارے] میں آئی ڈی ایف [اسرائیل ڈیفنس فورسز] کی ذمہ داری کو نقصان پہنچتا ہے۔” ان کی حکومت کی تبدیلیاں وزارت دفاع اور پولیس فورسز کی انتظامیہ کو متاثر کرتی ہیں۔

دوسروں کے علاوہ، دو اہم تبدیلیوں، جنہیں نیتن یاہو نے اپنے انتہا پسند اتحادیوں کو خوش کرنے کے لیے قبول کیا تھا،پر فوج کو سب سے زیادہ تشویش لاحق ہوئی ہے۔ پہلا اس بات سے متعلق ہے کہ مقبوضہ مغربی کنارے کی اسرائیلی فوج کی نگرانی کیسے کی جائے گی، اور دوسری ایڈجسٹمنٹ فلسطینی آبادی میں اسرائیلی پولیس فورسز کے امور کو متاثر کرے گی۔

پہلی تبدیلی کے ساتھ، نیتن یاہو حکومت نے مغربی کنارے میں اسرائیل کی نام نہاد سول انتظامیہ کو چلانے کے لیے وزارت دفاع کے اندر ایک نیا عہدہ تشکیل دیا ہے، جس میں علاقوں میں حکومتی سرگرمیوں کے کوآرڈینیٹر کے دفتر کی قیادت کرنے کے لیے جرنیلوں کی تقرری شامل ہے۔ دراصل یہ نیا سول-ملٹری ہائبرڈ ڈھانچہ ہو گا۔

لیکن عجیب بات یہ ہے کہ یہ نیا محکمہ اسرائیل کے نئے وزیر خزانہ بیزلیل سموٹریچ کے کنٹرول میں ہو گا، جو کہ مذہبی صیہونیت پارٹی کے سربراہ ہیں، جو اسرائیل کی انتہا پسند جماعتوں میں سے ایک ہے۔ سموٹریچ، جس نے نیتن یاہو کی نئی حکومت میں وزیر دفاع بننے کے لیے ناکام لابنگ کی، طویل عرصے سے مقبوضہ مغربی کنارے میں اپنے خاندان کے ساتھ رہنے والے غیر قانونی طور پر آباد ہیں۔

دوسری تبدیلی کا مقصد مغربی کنارے کی سرحدی پولیس- جو کہ فوج اور وزارت دفاع کے ماتحت تھی – کو نیتن یاہو کے ایک اور انتہا پسند اتحادی، اتمار بن گویر(Itamar Ben Gvir) ،جو انتہائی دائیں بازو کی Otzma Yehudit (یہودی طاقت) کی قیادت کرتا ہے، کو نوازنا ہے۔ بین گویر، ایک اور غیر قانونی آباد کار، اب اسرائیل کے قومی سلامتی کے وزیر ہیں جو ملک کی پولیس فورس کو بے مثال اختیارات کے ساتھ چلا رہے ہیں۔

چین آف کمانڈ کو توڑنے کا عمل
کوچاوی اور اس کے اتحادیوں کا پختہ یقین ہے کہ دونوں تبدیلیاں ممکنہ طور پر فوج کی چین آف کمانڈ کو نقصان پہنچائیں گی، اور اس کے حکام کو ملک کی انتہائی دائیں بازو کی قیادت کے تحت مختلف وزارتوں میں تقسیم کر دیں گے۔

یہ ساختی تبدیلیاں نیتن یاہو کی سیاسی مجبوریوں کی وجہ سے انتہائی دائیں بازو کے گروہوں کو "رعایت” کی شکل میں آ رہی ہیں اور اس پر”فوج کو رد عمل کا سامنا کرنا پڑا”،یہ اسرائیلی انٹیلی جنس کمیونٹی (آئی این ایس ایس)کے ایک سابق رکن یورام شوئٹزر کا کہنا، جو اب، دہشت گردی اور کم شدت کے تصادم کے پروگرام کے سربراہ ہیں۔

نیتن یاہو کی تبدیلیوں نے پہلے ہی فوجی اسٹیبلشمنٹ میں غصے کو جنم دیا ہے۔ دسمبر کے اوائل میں، اسرائیل کی سلامتی کے کمانڈرز، سابق اسرائیلی سینئر افسران کے ایک گروپ نے ایک عوامی خط شیئر کیا تھا جس میں متنبہ کیا گیا تھا کہ تنظیم نو سے "اندرونی تقسیم اور افسروں اور فوجیوں کے درمیان تصادم، ناانصافی، اور ماتحت قوتوں کی انارکی” کو ہوا دے سکتی ہے، جو بالآخر ” آئی ڈی ایف کو ایک موثر جنگجو قوت کے طور پر انتشار کا نشانہ بنانے ” کا باعث بنے گی۔ ۔”

لیکن نیتن یاہو کے انتہائی دائیں بازو کے اتحادیوں کے فوج پر نئے حکام کے خلاف فوج کے ردعمل کا مطلب یہ نہیں ہے کہ سیاسی اور فوجی ادارے آپس میں ٹکرائیں گے، شوئٹزر کے مطابق، جس کے ادارے نے گزشتہ ہفتے کوچاوی کی میزبانی کی تھی۔ شوائٹزر نے TRT ورلڈ کو بتایا کہ اعلیٰ جنرل نے اسرائیلی تھنک ٹینک INSS میں اپنے پروگرام کے دوران نیتن یاہو سے اپنی کال کے بارے میں بات نہیں کی۔

بہت سے ممالک میں، اگر کوئی فوج سیاسی قیادت کو انتباہ جاری کرتی ہے، تو اس کا عام طور پر مطلب یہ ہوتا ہے کہ فوج حکمرانی کے نظام میں مداخلت کر سکتی ہے۔ لیکن اسرائیل ایک جمہوری ریاست ہے، Schweitzer کا کہنا ہے کہ، اس بات کی یقین دہانی کراتے ہوئے کہ وہاں "کوئی فوجی بغاوت اور کوئی پرتشدد عمل نہیں ہوگا” کیونکہ فوج اندرونی معاملات میں مداخلت سے باز رہے گی۔

Schweitzer کے مطابق، چین آف کمانڈ ، نئی ​​حکومت کی تبدیلیوں کے حوالے سے اپنے شدید خدشات اور واضح احتجاج کے باوجود، فوج کی تنظیم نو کی "اطاعت” کرے گی اور ان سنگین حالات میں اپنے راستے پر چلنے کی کوشش کرے گی۔

لیکن ان کا استدلال ہے کہ نئی حکومت کی ساختی تبدیلیوں سے نہ صرف فوج بلکہ اسرائیلی عوام کو بھی تشویش ہونی چاہیے، بشمول نیتن یاہو کی اپنی پارٹی لیکوڈکے۔ شوئٹزر کا کہنا ہے کہ ’’نیتن یاہو کی خواہشات اسرائیلی فلاح سے ہم آہنگ نہیں ہیں،‘‘ انہوں نے مزید کہا کہ فوج کو متاثر کرنے والی تبدیلیاں ’’غیر منطقی اور ناممکن العمل ‘‘ ہیں۔
عقیدہ یہ ہے کہ نیتن یاہو نے ان تبدیلیوں کو اپنے ذاتی مفادات کی بنیاد پر قبول کیا۔ "امید ہے کہ اتحادی اور لیکوڈ پارٹی کے لوگ نیتن یاہو پر [فوج کی تنظیم نو پر] تبدیلیوں کو کم کرنے یا ان کی شدت میں تخفیف کے لیے دباؤ ڈالنے کی کوشش کریں گے،” Schweitzer کہتے ہیں۔

اگرچہ کچھ تجزیہ کاروں نے مشورہ دیا کہ نیتن یاہو کو کوچاوی کی کال کا تعلق ان کی سیاسی خواہشات سے بھی ہو سکتا ہے کیونکہ وہ اگلے ماہ مستعفی ہو جائیں گے، شویٹزر نہیں سوچتے کہ ایسا ہو سکتا ہے۔ اسرائیل میں ایریل شیرون اور یتزاک شامیر جیسے اہم سیاسی رہنما بھی عسکری پس منظر سے آئے تھے۔

تبدیلیوں کی فلسطین پر کیا اثرات ہوں گے
اگرچہ نیتن یاہو کی فوج کی تنظیم نو پر اسرائیلی سیاسی اور عسکری حلقوں کے اندر کافی بحث جاری ہے، لیکن یہ تبدیلیاں فلسطینیوں کے لیے اسرائیلیوں کے مقابلے میں زیادہ مہلک نتائج لائیں گی، ایک آزاد صحافی اور آنے والی کتاب The Palestine Laboratory: How Israel Exports the technology of Occupation around the world کےمصنف اینٹونی لووینسٹائن کہتے ہیں۔

سخت گیر نیتن یاہو حکومت "اسرائیلی فوج کے آباد کاروں کے حامی بازو کے لیے اور بھی زیادہ نظریاتی اور عملی احاطہ کی سہولت فراہم کرے گی،” لووینسٹائن نے TRT ورلڈ کو بتایا، اسرائیلی فوج کے اندر انتہائی دائیں بازو کے گروہوں اور مرکزیت پسندوں کے درمیان فوج کی سب سے اوپری پرت پر غلبہ حاصل کرنے کے لیے جاری جدوجہد کا حوالہ دیتے ہوئےکہا۔

کچھ مبصرین کے مطابق، فوج کی اعلیٰ قیادت جس میں مرکز پرستوں کا غلبہ ہے، فلسطینی تنازعے کے حوالے سے بہت سے نچلے درجے کے افسروں اور سپاہیوں کے مقابلے میں زیادہ معتدل موقف اپناتا ہے، جو Smotrich کی مذہبی صیہونیت اور Ben Gvir’s Jewish Power جیسی انتہا پسند جماعتوں کے بہت سے نظریات کو مانتے ہیں۔ دونوں جماعتیں فلسطینی ریاست کی شدید مخالفت کرتی ہیں۔

نتیجے کے طور پر، دونوں رہنماؤں نے طویل عرصے سے مقبوضہ علاقوں کے حوالے سے سیاسی پوسٹوں کو کنٹرول کرنے کا مقصد اسرائیلی ریاست کے اندر اپنا اثر و رسوخ بڑھانے کے لیے، آبادکاروں کے حامی فوجی دھڑے کو بااختیار بنانے کی کوشش ہے۔ بین گویر نے ہیبرون میں ہونے والے ایک حالیہ واقعے کے بعد اسرائیلی فوج کے لیے آزادانہ فائرنگ کے ضوابط کے لیے اپنی حمایت ظاہر کرتے ہوئے کہا، "ایسی حکومت کا وقت آ گیا ہے جو اپنے فوجیوں کی حمایت کرے اور انہیں کام کرنے کی اجازت دے”۔

لوئینسٹین کہتے ہیں، "حالیہ انتخابات میں اسرائیلی فوج کے ایک بڑے حصے نے انتہائی دائیں بازو کو ووٹ دیا اور یہ وہ فوجی ہیں جو پورے مغربی کنارے میں گشت کر رہے ہیں اور قبضے کو نافذ کر رہے ہیں،” لوئین سٹین کہتے ہیں۔
لیکن Loewenstein یہ نہیں سوچتے کہ سبکدوش ہونے والی اسرائیلی حکومت، جسے بہت سے تجزیہ کاروں نے موجودہ حکومت سے زیادہ اعتدال پسند پایا، فلسطینیوں کے لیے "زیادہ فیاض” تھی۔ اعداد و شمار سے لوئن اسٹائن کی بات بھی ثابت ہوتی ہے، جس میں نفتالی بینیٹ کی زیرقیادت اور یائر لیپڈ کی نگراں حکومت کے تحت 2022 کو مغربی کنارے میں فلسطینیوں کے لیے 15 سالوں میں سب سے مہلک سال کے طور پر دکھایا گیا ہے۔”تاہم، انتہائی دائیں بازو جلد ہی اسرائیلی فوج کے مکمل کنٹرول میں آجائے گا اور اس کا نتیجہ لازمی طور پر [مقبوضہ] مغربی کنارے اور [مقبوضہ] مشرقی یروشلم میں فلسطینی شہریوں پر مزید اسرائیلی حملوں کی صورت میں نکلے گا،” Loewenstein کہتے ہیں۔ موجودہ خوفناک صورتحال "مزید خراب” ہوگی کیونکہ اسرائیل "ایک تھیوکریٹک مستقبل کو قبول کرنے” کی طرف بڑھے گا۔

"فوج اور نیتن یاہو حکومت کے درمیان جو بھی تناؤ پیدا ہو سکتا ہے وہ یقینی طور پر اس سے کم اہم ہے جس کا فلسطینیوں کو اسرائیلی ریاست کے تحت ہر روز سامنا کرنا پڑتا ہے جو انہیں ایک تکلیف دہ مسئلےکے طور پر دیکھتی ہے۔بشکریہ شفقنا نیوز

نوٹ:ابلاغ نیوز کا تجزیہ نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

یہ بھی دیکھیں

پشاور میں خدا کا گھر جل گیا ہے

(تحریر: ڈاکٹر ندیم عباس) مسجد اللہ کا گھر اور امن کی جگہ ہے، یہاں پر …