جمعرات , 9 فروری 2023

الاقصی پر حملہ اسرائیل میں مذہبی حقوق کے لیے اچھا نہیں ہے

اتمار بن گویر ، 3جنوری کو، اسرائیل کے نئے حلف اٹھانے والے قومی سلامتی کے وزیر نے یروشلم میں الاقصیٰ کمپاؤنڈ پر حملہ کیا، جو اسلام کاتیسرا مقدس ترین مقام ہے۔ فلسطین اور بیرون ملک سے غم و غصہ اور مذمتیں تیزی سے سامنے آئیں۔

رملہ میں فلسطینی حکومت نے فلسطینیوں سے مطالبہ کیا کہ وہ "مسجد اقصیٰ پر چھاپوں کا مقابلہ کریں”، جب کہ غزہ میں حماس نے اس اقدام کو "ہماری مقدسات کے خلاف جارحیت” قرار دیا۔عرب ریاستوں – بشمول اردن، مصر، اور متحدہ عرب امارات، جنہوں نے اسرائیل کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لایا ہے – نے بن گویر کے اشتعال انگیز اقدامات کی مذمت کی۔ وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو کا ابوظہبی کا منصوبہ بند دورہ ملتوی کر دیا گیا۔

بائیڈن انتظامیہ نے اس اقدام کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ وہ "یروشلم میں مقدس مقامات کے حوالے سے تاریخی حیثیت کے تحفظ کے لیے مضبوطی سے کھڑی ہے”۔”سٹیٹس کو”، جسے بین گویر واضح طور پر چیلنج کرنے کا ارادہ رکھتا ہے، 19ویں صدی کا ایک ایسا انتظام ہے جو اس بات کی وضاحت ہے کہ یروشلم اور بیت المقدس میں مسلم اور عیسائی مقدس مقامات کا انتظام کس کے زمہ ہے۔ اسے دنیا بھر کے ممالک کے ساتھ ساتھ اقوام متحدہ نے بھی تسلیم کیا ہے اور اسے پابند بین الاقوامی قانون کی حیثیت حاصل ہے۔

الحرام الشریف، جہاں مسجد اقصیٰ واقع ہے، اردن میں ہاشمی بادشاہت کے زیر انتظام اسلامی وقف (اوقاف) کا حصہ ہے۔ اس طرح، سٹیٹس کو کے انتظام کی طاقت سے، یہ شاہ عبداللہ دوم اور اردن کی طرف سے مقرر کردہ یروشلم وقف کونسل کو فیصلہ کرنا چاہیے کہ اس کی حدود میں کیا ہوتا ہے۔

اپنی خواہش پر الحرام الشریف پر دھاوا بول کر، بن گویر اسے تبدیل کرنے اور اسلامی مقدس مقام پر اسرائیلی کنٹرول قائم کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔ اگرچہ اس اقدام کو مسلمانوں کے مذہبی حقوق کے لیے خطرہ کے طور پر دیکھا جا رہا ہے، لیکن اسرائیل کے قومی سلامتی کے وزیر اور اس کے اتحادی جس ایجنڈے پر عمل پیرا ہیں، وہ اسرائیل-فلسطین میں تمام مذہبی برادریوں ، بشمول بہت سے یہودیوں کے حقوق کی خلاف ورزی کرے گا ۔

بن گویر پہلے اعلیٰ سطحی اسرائیلی سیاست دان نہیں ہیں جنہوں نے الاقصیٰ پر حملہ کیا۔ کئی دہائیوں سے، اسرائیل نے یروشلم میں "سٹیٹس کو” کو ختم کرنے کی کوشش کی ہے – ایک ایسا مسئلہ جسے دائیں بازو کے اسرائیلی سیاست دان معمول کے مطابق دائیں طرف جھکاؤ رکھنے والے اسرائیلی ووٹروں کی حمایت حاصل کرنے کے لیے استعمال کرتے رہے ہیں۔

سال 2000میں لیکود پارٹی کے رہنما اور سابق وزیر ایریل شیرون الحرام الشریف میں زبردستی داخل ہو گیا تھا۔ اس نے "اسرائیل میں یہودیوں کے حق” کے بارے میں بات کی کہ وہ اسرائیل میں اقتدار کے لیے سیاسی کشمکش کے دوران اپنی مقبولیت کو بڑھانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ ان کے اشتعال نے کام کیا: وہ کئی ماہ بعد وزیر اعظم منتخب ہوئے۔

الاقصیٰ پر شیرون کے طوفان نے بالآخر اسرائیلی حکام کے لیے اس جگہ تک رسائی کے حوالے سے اردنی باشندوں کے ساتھ ہم آہنگی کو روکنے اور اس بات پر مکمل کنٹرول قائم کرنے کی راہ ہموار کی کہ کون اندر جا سکتا ہے اور کون نہیں۔

یہ اردن کی پالیسی رہی ہے کہ غیر مسلموں کو مخصوص اوقات میں الاقصیٰ کے احاطے میں داخل ہونے کی اجازت دی جائے جب مسلمان نماز نہیں پڑھ رہے ہوں؛ زائرین سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ اسلامی مزار کے ضوابط کا احترام کریں اور انہیں نماز پڑھنے یا مذہبی علامات کی نمائش سے روک دیا گیا ہے۔

اگرچہ اسرائیلی سیکورٹی گارڈز نے عام طور پر یہودی زائرین کو مقررہ اوقات کے باہر داخل ہونے سے روک رکھا ہے، لیکن وہ یہودیوں کی نماز اور الاقصیٰ کے احاطے میں مذہبی علامات کی نمائش کے بارے میں زیادہ نرمی کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔

بن گویر کا مقصد نہ صرف الاقصیٰ کے دورے کے موجودہ قوانین کی خلاف ورزی کرنا ہے بلکہ اسرائیل کے مکمل قبضے اور طے شدہ اصولوںکی تبدیلی کی قیادت کرنا ہے۔ اس نے واضح کیا ہے کہ ان کا خیال ہے کہ یہودیوں کو کمپاؤنڈ پر کنٹرول کرنا چاہیے اور اس میں عبادت گاہ بنانا چاہیے۔

حقیقت یہ ہے کہ اسرائیل نے پچھلی چند دہائیوں میں مسلمانوں کے اپنے مقدس مقام پر مذہبی حقوق کو آہستہ آہستہ سلب کیا ہے، موجودہ آخری اقدام یہ ظاہر کرتا ہے کہ وہ اس سمت میں آگے بڑھ رہا ہے۔اور یہ صرف مسلمان ہی نہیں ہیں جنھیں اپنے مقدس مقامات کے لیے خوفزدہ نہیں ہونا چاہیے۔ یروشلم کی جارحانہ یہودیت جس کا متواتر اسرائیلی حکومتوں نے ارتکاب کیا ہے، اس شہر کی مقامی مسلم اور عیسائی برادریوں کو نہ صرف بے دخل کرنے بلکہ مذہبی املاک پر قبضے سے بھی خطرہ ہے۔

یروشلم میں پروٹسٹنٹ قبرستان پر حالیہ حملہ جس میں عیسائیوں کی قبروں کی بے حرمتی کی گئی، اس بات کا واضح ثبوت ہے کہ فلسطینی عیسائیوں کو بھی اپنے مسلمان بھائیوں اور بہنوں کی طرح تاریک انجام کا سامنا ہے۔ عیسائیوں کو اکثر یروشلم اور بیت المقدس میں ان کے مقدس مقامات پر جانے سے بھی روک دیا جاتا ہے، کیونکہ اسرائیل غزہ اور مغربی کنارے سے ان کی رسائی کو منظم کرتا ہے۔

یروشلم میں مختلف عیسائی فرقوں سے تعلق رکھنے والی املاک کو اسرائیلی ریاست یا آباد کار تنظیموں کی جانب سے ضبط کرنے کا خطرہ ہے۔ مثال کے طور پر، جافا گیٹ کے قریب پیٹرا ہوٹل ایک طاقتور یہودی آباد کار گروپ کے قبضے کے خطرے میں ہے، جبکہ سلوان میں ایک اراضی کو حال ہی میں یہودی آباد کاروں نے غیر قانونی طور پر باڑ لگا دی تھی۔ دونوں جائیدادیں یونانی آرتھوڈوکس چرچ کی ہیں۔

لیکن جیسے جیسے اسرائیل تھیوکریسی کی طرف بڑھ رہا ہے، یہ صرف غیر یہودیوں کے حقوق ہی خطرے میں نہیں ہیں۔ یہودی – خاص طور پر لبرل یہودی یا جو اصلاحی یہودیت کی پیروی کرتے ہیں – بھی اپنے مذہبی حقوق کو ختم ہوتا ہوتے ہوئے دیکھیں گے۔

مثال کے طور پر، یونائیٹڈ تورہ یہودیت پارٹی، جو حکمران اتحاد کا حصہ ہے، نے واضح کیا ہے کہ وہ عوامی مقامات پر صنفی علیحدگی کو گہرا کرنے، سبت کے دن کو مزید نافذ کرنے اور لبرل یہودیت کے لیے کسی بھی حکومتی حمایت کو کم کرنے کی کوشش کرے گی۔ انتہائی قدامت پسند عناصر نے یہودیت قبول کرنے اور اسرائیل میں ان کی حیثیت اور یہودیوں اور غیر یہودیوں کے درمیان شادی کا مسئلہ بھی اٹھایا ہے، جو ان کے خیال میں حرام ہونا چاہیے۔

اسرائیل کی سیاست جو انتہائی دائیں بازو کی سیاست ہے، انتہائی مذہبی سمت اختیار کر رہی ہے وہ کچھ عرصے سے ظاہر ہو رہی ہے۔ مغرب کی طرف سے کوئی بھی "مذمت” اسے تبدیل نہیں کرے گی۔

یہ یاد رکھنا اچھا ہوگا کہ شیرون کا 2000 میں الاقصی پر حملہ ان چنگاریوں میں سے ایک تھا جو دوسری انتفاضہ کا باعث بنا۔ فلسطینی، اور ان کے حامی، اسرائیل کی جانب سے ان کے مذہبی حقوق کی خلاف ورزی اور ان کے مقدس مقامات پر قبضہ کرنے کی کوششوں کو غیر فعال طور پر قبول نہیں کریں گے۔ سوال یہ ہے کہ کیا عالمی برادری گزشتہ کئی دہائیوں کی طرح غیر فعال طور پر دیکھے گی یا آخر کار اسرائیل کے خلاف فیصلہ کن کارروائی کرے گی اور اس کے جرائم کو روکے گی؟بشکریہ شفقنا نیوز

نوٹ:ابلاغ نیوز کا تجزیہ نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

یہ بھی دیکھیں

زلزلے کے بعد ملبے تلے دبے افراد کتنے وقت تک زندہ رہ سکتے ہیں؟

(شیگل کیساپوگلو) ترکی اور شام میں پیر کے روز 7.8 شدت کا زلزلہ آنے کے …