اتوار , 29 جنوری 2023

افغانستان سے امریکی اسباق اور جنوبی ایشیا کے لیے مضمرات

اکیسویں صدی میں عظیم طاقت کے مقابلے کی حرکیات کافی پیچیدہ ہیں۔ امریکہ نے افغانستان کی جنگ سے یہ سیکھا کہ فوجی کارروائیاں صرف اقتصادی بحران کا باعث بنیں گی بلکہ اس طویل تنازع کے نتیجے میں فوجوں کے انخلا کا مطالبہ کرنے والی رائے عامہ میں زبردست تبدیلی آئے گی۔

اس نے بین الاقوامی سطح پر امریکہ کے امیج کو بھی نقصان پہنچایا۔ واٹسن انسٹی ٹیوٹ فار انٹرنیشنل اینڈ پبلک افیئرز کے جنگی اخراجات کے منصوبے کے مطابق، 2001 میں افغانستان پر حملہ کرنے کے بعد سے، امریکہ اس جنگ پر 2.313 ٹریلین ڈالر خرچ کر چکا ہے۔ اس کا یہ بھی اندازہ ہے کہ براہ راست نتیجہ میں 243,000 افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

9/11 کے بعد امریکہ کو زبردست عوامی حمایت حاصل ہوئی کیونکہ 93 فیصد امریکیوں نے 9/11 کے حملوں کے ذمہ داروں کے خلاف فوجی کارروائی کی حمایت کی لیکن یہ حمایت برقرار نہیں رہی۔ اگست 2021 کے ایک سروے سے پتا چلا کہ 62 فیصد امریکیوں کا خیال ہے کہ افغانستان میں جنگ لڑنے کے قابل نہیں ہے۔ اسی طرح، اگست کے آخر میں پیو کے ایک سروے سے پتا چلا کہ 69 فیصد امریکیوں کا خیال نہیں تھا کہ امریکہ نے افغانستان میں اپنے مقاصد حاصل کر لیے ہیں۔

سوویت یونین کے ٹوٹنے اور دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان امریکہ کے لیے مہرہ تھا۔ سوویت یونین کے ٹوٹنے کے بعد، افغانستان طالبان کی حکومت میں رہ گیا تھا لیکن 9/11 کے بعد، امریکہ نے طالبان کی حکومت کا تختہ الٹ دیا۔ اس کے بعد افغانستان میں جنگ ایک دلدل بن گئی جو دو دہائیوں تک جاری رہی۔ امریکی فوجی دستے بائیڈن انتظامیہ کے تحت افغانستان سے چلے گئے اور اسے طالبان کے دور میں چھوڑ دیا۔ ستمبر 2021 میں جاری ہونے والے واشنگٹن پوسٹ/اے بی سی نیوز کے سروے میں پتا چلا کہ ان لوگوں میں سے جنہوں نے دستبرداری کی منظوری دی، صرف 26 فیصد نے اس بات کی بھی منظوری دی کہ یہ کیسے ہوا؛ 52 فیصد نے نامنظور کیا۔

انخلا کے بعد بائیڈن کا کہنا ہے کہ امریکہ کو اپنی غلطیوں سے سبق سیکھنا چاہیے اور یہ کہ انخلا نے "دوسرے ممالک کو دوبارہ بنانے کے لیے بڑے فوجی آپریشنز کے دور” کے خاتمے کا نشان لگایا۔ بائیڈن انتظامیہ کے تحت، امریکی قومی سلامتی کی حکمت عملی 2023 مقابلے کے خیال کے گرد گھومتی ہے۔ اس میں حریفوں کا مقابلہ کرنے کے لیے ایک مربوط ڈیٹرنس اپروچ شامل ہے۔ امریکہ دوسری ریاستوں کو اپنی جنگ میں گھسیٹنا چاہتا تھا، جیسا کہ اس نے سرد جنگ کے دور میں پہلے کیا تھا۔

امریکہ کا دعویٰ ہے کہ وہ آج کے مسابقتی ماحول میں مقابلہ کرنا چاہتا ہے اور ساتھ ہی ایک اصول پر مبنی بین الاقوامی نظم کو بھی محفوظ رکھتا ہے جو اقتصادی ترقی، امن اور سلامتی کی حوصلہ افزائی کرتا ہے۔ امریکہ اور اس کے اتحادیوں کی مدد کرنے والے ہزاروں افغانوں کے ساتھ ساتھ 200 تک امریکی طالبان کے دور حکومت میں افغانستان میں پھنسے ہوئے تھے۔ دہشت گردی کے خلاف جنگ نے پاکستان کو جو نقصان پہنچایا ہے اس سے ابھی تک باز نہیں آیا ہے۔ مزید یہ کہ امریکہ دہشت گردی کے خلاف جنگ کے نقصانات پر قابو پانے کے لیے مالی امداد کے وعدوں کو پورا کرنے میں بھی ناکام رہا جس میں پاکستان پیش پیش تھا۔ ڈاکٹر حفیظ پاشا نے اپنی کتاب Growth and Inequality – Agenda for Reforms میں اندازہ لگایا ہے کہ پاکستان کی معیشت کو دہشت گردی کے خلاف امریکی قیادت میں جنگ کی وجہ سے 252 بلین ڈالر کا زبردست نقصان ہوا ہے جو کہ واشنگٹن کی طرف سے اسلام آباد کو دی جانے والی مالی امداد سے تقریباً آٹھ گنا زیادہ ہے۔

عظیم طاقت کے مسابقت کے اس دور میں، امریکہ نے چین کے عروج کا مقابلہ کرنے کے لیے جنوبی ایشیائی خطے میں ہندوستان پر توجہ مرکوز کی جو اس کا ایک طویل مدتی خطرہ ہو گا، حالانکہ چین کا دعویٰ ہے کہ اس کا عروج پرامن ہے۔ چین کے عروج سے جنوبی ایشیا کے امن و استحکام کو خطرہ نہیں ہے لیکن امریکی مداخلت خطے کے امن، سٹریٹجک استحکام اور طویل مدتی سلامتی کے لیے خطرہ ہے۔

سٹریٹجک صف بندیوں میں خود کو امریکہ کی طرف رکھنے سے ہندوستان کا فرض کیا ہوا احساس بالادستی مزید بڑھ رہا ہے۔ مزید یہ کہ بھارت روس کو اپنے دفاعی پارٹنر کے طور پر کھونے کو بھی تیار نہیں ہے۔ سرد جنگ کے دور میں جس طرح سے ہندوستان نے ناوابستہ نقطہ نظر کے ذریعے دونوں بلاکس سے فائدہ اٹھایا، وہ دونوں فریقوں سے زیادہ سے زیادہ فائدہ حاصل کرنا چاہتا ہے۔ پاکستان اب بھی دہشت گردی کے اس جال کے خلاف لڑ رہا ہے جس میں وہ افغانستان کے خلاف جنگ میں امریکہ کا ساتھ دے کر پھنس چکا ہے۔ جنوبی ایشیائی خطے میں امریکہ کی مداخلت سے نہ پہلے امن قائم ہوا اور نہ ہی مستقبل میں اس کی توقع ہے۔

امریکہ اور اس کے ایشیا پیسیفک اتحادی بھارت کے ساتھ سٹریٹجک پارٹنرشپ کے ذریعے پاک بھارت دوطرفہ کشیدگی کو مزید تیز کرنے جا رہے ہیں اس طرح خطے کے سٹریٹجک استحکام کو خطرہ ہے۔ جس طرح سے وہ اپنے حریفوں کا مقابلہ کرنے کے لیے کلیدی اتحادیوں کو متحد کر رہا ہے اس سے بین الاقوامی سطح پر امن و سلامتی کو برقرار رکھنے میں کوئی مدد نہیں ملے گی۔بشکریہ شفقنا نیوز

نوٹ:ابلاغ نیوز کا تجزیہ نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

یہ بھی دیکھیں

پاک روس تعلقات

(تحریر : ڈاکٹر رشید احمد خاں) پاکستان اور روس کے درمیان دو طرفہ بنیادوں پر …