جمعرات , 9 فروری 2023

ایران مخالف جذباتی رویے یورپ کو مہنگے پڑ سکتے ہیں:ایران

تہران:ایرانی وزیر خارجہ حسین امیر عبداللہیان نے کہا کہ ای سی او کا خطہ توانائی پیدا کرنے والے اور استعمال کرنے والے ممالک کے درمیان شراکت داری کا نمونہ بن سکتا ہے اور گیس اور بجلی میں مشارکت اس سلسلے میں ای سی او کی ترجیحات میں شامل ہے۔

ایران کے وزیر خارجہ حسین امیر عبداللہیان نے منگل کو ازبکستان کے شہر تاشقند میں ای سی او کونسل آف منسٹرز (COM) کے چھبیسویں اجلاس سے خطاب کیا۔ ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ دنیا میں حالیہ برسوں کی صورتحال اور ہمارے خطے پر اس کے اثرات نے خطے کے ممالک کے درمیان ہم آہنگی کی ضرورت کو دوگنا کردیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ کرونا وائرس اور اس کے تباہ کن اثرات کے سمیت دنیا میں خوراک اور توانائی کے تحفظ کے حالیہ بحرانوں نے واضح طور پر مختلف ممالک کی اقتصادی صلاحیتوں سے قطع نظر ان کی کمزوری کو ظاہر کیا۔ لہٰذا دنیا اور خطے کے تمام ممالک کے لیے مستقبل میں ممکنہ جھٹکوں کے خلاف لچک کو مضبوط کرنا کوئی انتخاب نہیں بلکہ ضرورت ہے۔ یقیناً اس لچک کو محسوس کرنے کے لیے دستیاب انتخاب میں سے ایک کثیر جہتی میکانزم کی شکل میں اجتماعی تعاون ہے۔

امیر عبداللہیان نے مزید کہا کہ ای سی او رکن ممالک کے درمیان علاقائی تجارت کو فروغ دینا چاہیے۔ انہوں نے تجویز پیش کی کہ اقتصادی تعاون تنظیم کے تجارتی معاہدے (ECOTA) کے صرف 5 رکن ممالک ہی نہیں بلکہ تمام اراکین علاقائی سطح پر تجارتی لبرلائزیشن کے لیے مذاکرات کے آغاز کی حمایت کریں۔

انہوں نے کہا کہ دنیا اور خطے میں توانائی کے تحفظ کے موجودہ بحران نے واضح طور پر توانائی استعمال کرنے والے ممالک کے غیر متوقع جھٹکوں کے خطرے کو ظاہر کیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ موسمیاتی تبدیلیاں اور حالیہ موسم سرما کی سردی نے بھی توانائی پیدا کرنے والے کچھ ممالک کی کمزوری کو اجاگر کیا۔ انہوں نے کہا کہ ای سی او کا خطہ توانائی پیدا کرنے والے ممالک اور توانائی استعمال کرنے والے ممالک کے درمیان شراکت داری کا نمونہ بن سکتا ہے۔ بلا شبہ اس سلسلے میں گیس اور بجلی کے شعبوں میں شراکت ای سی او کی ترجیحات میں شامل ہے۔

امیر عبداللہیان نے گیس برآمد کرنے والے ممالک کی اسمبلی میں ایرانی صدر کے اقدام کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ یہ اقدام ای سی او خطے میں شراکت کی بنیاد بھی بن سکتا ہے۔

انہوں نے زور دے کر کہا کہ ای سی او کو نئی ٹیکنالوجی، نالج بیسڈ صنعتوں اور معاشی سرگرمیوں کی ڈیجیٹلائزیشن کے میدان میں مزید سرمایہ کاری کی ضرورت ہے۔ اسلامی جمہوریہ ایران ای سی او کے رکن ممالک کے ساتھ علم پر مبنی شعبوں میں اپنے تجربات اور کامیابیوں کو بانٹنے کے لیے تیار ہے۔

ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ ایران نے ہمیشہ ایسے اقدامات اور تجاویز کا خیرمقدم کیا ہے جو رکن ممالک کی اقتصادی ترقی میں ای سی او کے کردار اور پوزیشن کو مضبوط کرنے کا باعث بنتے ہیں۔

انہوں نے افغانستان کو ایک انتہائی اہم رکن کے طور پر یاد کیا اور کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران افغانستان کے لیے ای سی او کی حمایت کی پالیسی وضع کرنے اور اس کی منظوری دینے والے اہم ممالک میں سے ایک ہے اور اس نے ہمیشہ اس پر مکمل اور موثر عمل درآمد کی ضرورت کی حمایت کی ہے۔ایران کے وزیر خارجہ نے کہا کہ بلاشبہ افغانستان میں ایک جامع حکومت کے قیام سے نہ صرف امدادی پروگراموں اور ملک کی تعمیر نو میں مدد مل سکتی ہے بلکہ اس سے خطے کے لیے دہشت گردی کی کارروائیوں، پناہ گزینوں اور منشیات کی اسمگلنگ سے پیدا ہونے والے خطرات میں بھی کمی آئے گی۔

امیر عبداللہیان نے افغانستان میں خواتین کے لیے یونیورسٹی کی تعلیم کی معطلی کا حوالہ دیتے ہوئے اسے دین اسلام کی تعلیمات سے متصادم اقدام قرار دیا اور اس پر گہری تشویش کا اظہار کیا۔

انہوں نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران خطے میں اپنے وعدوں کی پاسداری کے علاوہ عالمی میدان میں اپنی ذمہ داریوں کی پاسداری کرتا ہے۔ انسانی حقوق کے مسائل پر توجہ دینا اسلامی جمہوریہ ایران کی ترجیحات میں شامل ہے اور وہ ہمیشہ باہمی احترام اور سنجیدہ شراکت داروں کے ساتھ بامعنی بات چیت کے دائرہ کار میں بات چیت کا خیرمقدم کرتا ہے۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ ایران ماحولیاتی چیلنجوں اور موسمیاتی تبدیلیوں سے نمٹنے کے لیے عالمی اور علاقائی اقدامات اور پروگراموں میں فعال اور ذمہ داری کے ساتھ حصہ لے رہا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہم اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کی قرارداد کی بنیاد پر بین الاقوامی ڈسٹ انٹرنیشنل کانفرنس کے انعقاد کی کوشش کر رہے ہیں۔

انہوں نے ایران مخالف قراردادوں کی طرف بھی اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران کی خارجہ پالیسی متوازن خارجہ پالیسی، دنیا کے ساتھ تعامل اور تعاون اور اندرونی معاملات میں عدم مداخلت پر مبنی ہے۔ ہم یورپی پارلیمنٹ کی مداخلت پسند اور غیر روایتی قرارداد کے اجراء کی شدید مذمت کرتے ہیں۔ بلاشبہ اس قسم کے جذباتی رویے کے منفی نتائج یورپ کے لیے مہنگے پڑیں گے۔ بین الاقوامی تعاملات میں سفارت کاری، تعمیری تعامل اور معقولیت پر توجہ بہترین طریقہ ہے۔

امیر عبداللہیان نے سویڈن میں قرآن مجید کی بے حرمتی کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ ایران الہامی مذاہب کے مقدسات کے خلاف توہین آمیز رویے بالخصوص قرآن کریم کی توہین اور آزادی اظہار کے عنوان سے مغربی حکومتوں کی حمایت کی شدید مذمت کرتا ہے۔

یہ بھی دیکھیں

’ابراہم معاہدے‘ امارات اور اسرائیل میں خواتین کا قائدانہ کردار

دبئی: متحدہ عرب امارات (یو اے ای) اور اسرائیل میں مضبوط خواتین قیادت کی ایک …