بدھ , 8 فروری 2023

بدقسمتی سےعدلیہ نے ہمارے بنیادی حقوق کی حفاظت نہیں کی، عمران خان

لاہور : سابق وزیر اعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ بدقسمتی سے ہماری عدلیہ نے ہماری بنیادی حقوق کی حفاظت نہیں کی۔اپنے خطاب کے دوران عمران خان نے کہا کہ کسی وزیر اعظم کو حکومت سے نکلنے کے بعد وہ عزت نہیں ملی جو مجھے ملی، عوام ایک خطرناک موڑ کر کھڑے ہیں، اللہ نے ہمیں جہاد کا حکم دیا ہے، ظلم کے خلاف کھڑا ہونا جہاد ہوتا ہے، پاکستان میں سارے ہی لوگ عاشق رسول ﷺ ہیں لیکن اللہ ہماری دعا کیوں نہیں سن رہا کیونکہ یہاں طاقتور طبقے کا راج ہے۔

سابق وزیر اعظم نے کہا کہ اپریل میں ہماری حکومت گئی تو آٹا 65 روپے کلو تھا، عالمی مارکیٹ میں قیمتیں کم ہونے کے باوجود یہاں پیٹرول اور ڈیزل مہنگا ہے، غربت بڑھتی جارہی ہے، تنخواہ دار طبقے سے پوچھیں ان کے کیا حالات ہیں، وہ کیسے گزارا کررہے ہیں۔عمران خان نے کہا کہ ملک کے طاقتور ڈاکوؤں نے اپنے خلاف 1100 ارب روپے کے کرپشن کیسز ختم کرادیئے اور ملک کو تباہی کی طرف دھکیل دیا۔ پہلی بار لوگوں کو خوف آنا شروع ہو گیا ہے۔

عوام کو مخطب کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ میری جدو جہد عوام کے لیے ہے، اس کے لئے سب کو کھڑا کرنا ہوگا، اگر اس وقت ہم کھڑے نہ ہوئے تو آگے اندھیرا ہے۔سابق وزیر اعظم نے کہا کہ الیکشن کمیشن نے محسن نقوی کو پنجاب کا چیف منسٹر بنایا، کیا انہیں نہیں پتہ کے آئین کے آرٹیکل 218 کے تحت ان کی سب سے بڑی ذمہ داری شفاف انتخابات کرانا ہے۔ ہم نے اپنی طرف سے نیوٹرل امپائرز رکھنے کی کوشش کی تو پھر محسن نقوی کو کیوں وزیر اعلیٰ مقرر کیا گیا۔ نیب کے چیئرمین آفتاب سلطان نے محسن نقوی کے خلاف تفتیش کی تھی، اس تحقیقات پر اس نے نیب کو 35 لاکھ روپے واپس کئے تھے۔

عدلیہ سے اپیل کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ ہمارے بنیادی حقوق کا تحفظ کیا جائے، جمہوریت کو بچائیں، بدقسمتی سے ہماری عدلیہ نے ہماری بنیادی حقوق کی حفاظت نہیں کی، اگر کی ہوتی تو آج پنجاب مین وہ پولیس اہلکار دوبارہ مسلط نہ ہوتے جنہوں نے 25 جولائی کو ہم پر ظلم کیا تھا۔

یہ بھی دیکھیں

پی ٹی آئی کا 33 حلقوں پر ضمنی انتخابات کی تاریخ تبدیل کرنے کا مطالبہ

اسلام آباد: تحریک انصاف نے قومی اسمبلی کی 33 نشستوں پر ضمنی انتخابات 16 مارچ …