بدھ , 21 فروری 2024

استقامت و مقاومت جاری ہے

(ترتیب و تنظیم: علی واحدی)

یمن کی تحریک انصار اللہ کے ترجمان "محمد عبدالسلام” نے جمعہ کے دن غزہ پٹی میں ہونے والی جنگ بندی کے نفاذ کے بعد اعلان کیا کہ ہم فلسطینی عوام کو ان کے استحکام اور جارحین کا مقابلہ کرنے کے لیے مزاحمتی بلاک کے ساتھ کھڑے ہونے پر مبارکباد پیش کرتے ہیں۔ تحریک انصار اللہ کے ترجمان نے مزید کہا کہ فلسطینی عوام کی غیر معمولی استقامت نے صیہونی دشمن کے اہداف کو ناکام بنا دیا اور انہیں مزاحمت کی تمام شرائط کے ساتھ جنگ ​​بندی کو قبول کرنے پر مجبور کر دیا۔ عبدالسلام نے مزید کہا کہ اس جنگ میں دشمن نے اپنے اعلان کردہ اہداف میں سے کوئی بھی حاصل نہیں کیا۔

تحریک انصار اللہ کے ترجمان نے کہا کہ مزاحمت غزہ میں رہے گی، جس کی سربراہی حماس کر رہی ہے اور دشمن کے پاس اپنے تزویراتی نقصانات کو قبول کرنے کے علاوہ کوئی چارہ نہیں ہے۔ طوفان الاقصیٰ آپریشن اور صیہونی حکومت کی بھاری شکست کے بعد قابض فوج نے حماس کے بنیادی ڈھانچے کو تباہ کرنے کے لیے زمینی راستے سے غزہ میں داخل ہونے کا فیصلہ کیا اور کافی نقصان پہنچایا۔ ڈیڑھ لاکھ سے زائد افراد کو بے گھر اور 14 ہزار سے زائد افراد کو شھید کیا، لیکن وہ اب تک حماس کے بنیادی ڈھانچے کو تباہ کرنے میں کامیاب نہیں ہوسکی اور اسے بہت زیادہ جانی و مالی نقصان اٹھانا پڑا۔بشکریہ اسلام ٹائمز

 

نوٹ:ابلاغ نیوز کا تجزیہ نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

یہ بھی دیکھیں

مریم نواز ہی وزیراعلیٰ پنجاب کیوں بنیں گی؟

(نسیم حیدر) مسلم لیگ ن کی حکومت بنی تو پنجاب کی وزارت اعلیٰ کا تاج …